کراچی ، ساکنان شہر قائد کا عالمی مشاعرہ تنازعات کا شکار ہو گیا

  کراچی (اسٹاف رپورٹر)ساکنان شہر قائد کا عالمی مشاعرہ تنازعات کا شکار ہوگیا ۔سلور جوبلی مشاعرے کو بانی اظہر عباس ہاشمی مرحوم کے نام سے موسوم کیا گیاتھالیکن فرحان الرحمن نے علیحدہ مشاعرہ کروانے کا اعلان کیا جو بعد میں غیرمشروط طور پر ساتھ مل کے مشاعرہ کروانے پر آمادہ ہوئے اگر چہ ان کا شعر و ادب سے کوئی براہ راست تعلق نہیں ،تفصیلات کے مطابق عالمی مشاعرے کی کمیٹی کو ہائی جیک کرنے کا الزام بانی اراکین کی طرف سے لگایا گیا ہے یہی وجہ ہے کہ انہوں نے ایکسپو سینٹر میں منعقد ہونے والے مشاعرے سے اعلان لاتعلقی کردیا ہے یہ بھی کہا جارہا ہے کہ آرٹس کونسل کراچی کے ذمہ داران مشاعرے کے انتظامات اپنے ہاتھ میں لینے کی کوشش کررہے ہیں جن افراد کے نام مشاعرے کے دعوت نامے پر شائع کیے گئے ہیں ان میں محمود خان ،راشد عالم اور فرحان الرحمن ہیں جو شعر و ادب سے نابلد ہیں جس پر بانی اراکین خصوصاً سید صفوان اللہ سابق وفاقی وزیر نے اعلان لاتعلقی کردیاہے ۔یہ بات بھی باعث حیرت ہے کہ جن شعرا خواتین و حضرات کو مدعو کیا جارہا ہے ان میں سے بیشتر عالمی معیار سے بہت کم درجہ کے حامل ہیں ۔پیرزادہ قاسم رضا صدیقی بھی اپنے تحفظات کا اظہار کرچکے ہیں ۔ممبران ساکنان شہر قائد مشاعرہ کمیٹی نے مطالبہ کیا ہے کہ گورنر سندھ محمد زبیر اس سلسلے میں اپنا کردار ادا کریں تاکہ شہر کراچی کا یہ مشاعرہ حقیقی شعرا کی نمائندگی کے ساتھ منعقد ہوسکے ۔