صوابی ،قتل کے ملزمان باپ بیٹے کی سزا کالعدم

پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ کے جسٹس وقار سیٹھ اور جسٹس یونس تہیم پرمشتمل دورکنی بنچ نے گمبت صوابی قتل کیس کے باپ بیٹا ملزموں کی مجموعی طورپر50سال قید بامشقت اور2 لاکھ روپے جرمانہ کی سزاکالعدم قرار دے دی اور ملزموں کوبری کردیا ملزمان کی جانب سے صاحبزادہ اسداللہ ایڈوکیٹ نے اپیل کی پیروی کی استغاثہ کے مطابق ملزمان امیرامان اور اس کے بیٹے زرامان ساکنان گمبت صوابی پرالزام ہے کہ انہوں نے تھانہ چھوٹالاہورصوابی کی حدود میں 23 نومبر2013ء کوفائرنگ کرکے دلسوز محمد ساکن صوابی کو قتل کردیاتھا فریقین میں دیرینہ عداوت بتائی جاتی ہے ماتحت عدالت نے جرم ثابت ہونے پرملزموں کو عمرقید اورایک لاکھ روپے جرمانہ کی سزاسنائی جس کے خلاف انہوں نے پشاورہائی کورٹ میں اپیلیں دائرکیں اس موقع پردرخواست گذاروں کے وکیل نے عدالت کو بتایاکہ مقدمے کی سماعت کے دوران عینی شاہد کابیان قلمبند نہیں کیاگیاجبکہ استغاثہ کے گواہوں کے بیانات میں واضح تضاد ہے لہذاسزاکالعدم قرار دی جائے فاضل بنچ نے دلائل مکمل ہونے پراپیلیں منظورکرکے سزاکالعدم قرار دے دی ۔