لیبر فیڈریشن کا برطرف ورکروں کی بحالی کیلئے احتجاجی مارچ

پشاور (کرائمز رپورٹر)محنت کش لیبر فیڈریشن نے برطرف ورکروں کی بحالی اور مزدور کی مقرر کردا اُجرت پر عمل درآمد نہ کر نے کا خلاف گزشتہ روز پشاور پریس کلب سے صوبائی اسمبلی تک احتجاجی مارچ کیا جس کی قیادت محنت کش لیبر فیڈریشن کے صدر ابرار اللہ،جنرل سیکرٹری شیر ذادہ،احسان اللہ سمیت دیگر کر رہے تھے مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈز اور بینرز اُٹھا رکھے تھے جن پر مختلف قسم کے نعرے درج تھے مقررین کا خطاب کرتے ہو ئے کہنا تھا کہ خیبر پختونخوا کی حکومت مزدوروں کو حقوق دینے میں مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے جبکہ فیکٹری مالکان مزدوروں کی مسلسل استحصال کررہے ہے۔جس کی مثال مقررہ اُجرت پر عمل درآمد تاحال نہیں ہوسکا۔اُنہوں نے کہا کہ پاکستان ٹوبیکو کمپنی،فلپ مورس پا کستان لمیٹڈ ،شمع گھی ملز ،پریمر شگر میل نے مزدوروں کا معاشی قتل عام شروع کیا ہوا ہے اور اب تک 144مزدوروں کو بے دخل کیا گیا ہے اُنہوں نے کہا کہ ڈائریکٹر لیبر خیبر پختونخوا کو فارغ کرکے ان کے خلاف انکوئری کی جا ئے اُنہوں نے مطالبہ کیا کہ ڈی ایس پی نوشہرہ کو معطل کیا جا ئے اور پاکستان ٹوبیکو کمپنی اکوڑہ نوشہرہ سے قانونی یونین رجسٹرڈ کر نے کی پادش میں نکالے گئے 144ورکرز کو فوری بحال کیا جا ئے اور اُنکے بچوں کو سکول اور صحت کی سہولیات دی جا ئے۔