تازہ ترین

ای پیپر

شاہد نذیر چودھری

شاہد نذیر چودھری

پہلوانوں کی داستانیں ۔ ۔۔ قسط نمبر 23

سلطان پہلوان نے باپ کے قل ختم ہونے پر گوجرانوالہ کا اکھاڑہ شروع کر دیا۔ بچپن میں کسرت و ریاضت سے اس کا جسم بڑا خوبصورت تھا لہٰذا جب اس پر جوانی کی بہاریں آنی شروع ہوئیں تو اس کا انگ انگ فن پہلوانی کا مظہر بنتا چلاگیا۔ اس نے جلد ہی ثابت کر دیا کہ وہ اپنے باپ کی جاگیر کا جائز حقدار ...

تفصیل پڑھیں

پہلوانوں کی داستانیں ۔ ۔۔ قسط نمبر 22

موتی رام نے سب سے پہلے یہ کام کیا کہ لگان ساٹھ لاکھ سے گھٹا کر اکیس لاکھ کر دیا مگر حالات قابو میں نہ آئے۔ جس پر24اگست1820ء کو ایک مشہر سکھ جرنیل سردار ہری سنگھ اوپل کوکشمیر کا گورنر بنا دیا گیا۔ اس نے چند عوامی نوعیت کے کام کئے جس سے وادی مقں درے سکون ہوا۔ ہری سنگھ نے بیگار لینے کا ...

تفصیل پڑھیں

وہ پہلوان جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر 21

رحیم سیندوریہ طاقت اور فن کا سرچشمہ تھا۔اس کے بازوؤں میں بے پناہ طاقت تھی اور ٹانگیں تیز دھار تلوار تھیں۔ جن کی لپیٹ میں اگر چھوٹا موٹا ہاتھی بھی آجائے تو ایک لمحہ میں اس کو ٹانگوں پر اچھال کر دور پھینک دیتا تھا۔ ایک عام یا بڑا پہلوان اس کی ٹانگوں کی تاب ہی نہ لا سکتا تھا۔ رحیم ...

تفصیل پڑھیں

وہ پہلوان جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر 20

رحیم بخش نے شفقت بھری نظروں سے گاماں کو دیکھا اور مسکرا دیا۔ اسے پر اعتماد گاماں کا یہ چیلنج بڑا پسند آیا اور اسے قبول کرلیا۔ رحیم بخش کا یہ چیلنج قبول کرنا فراخدالی کا ثبوت تھا۔ اگر چاہتا تو یہ کہہ کر رد کر سکتا تھا کہ پہلے میرے کسی شاگرد سے لڑو۔ مگر وہ جس کینڈے کا پہلوان تھا اس ...

تفصیل پڑھیں

وہ پہلوان جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر 19

وہ اکھاڑے میں اترتا اور چھا جاتا۔۔۔اس کا اکھاڑے میں اترنا ایک دلکش منظر سے کم نہ ہوتا۔ اس نے چوڑے چکلے سینے پر سیندور کی مالش کی ہوتی اور جب ڈھولچی اپنے ڈھولوں کو پیٹنے لگتے تو وہ میدان میں سلامی دینے آجاتا اور دل لبھانے کے سے انداز میں دھمال ڈالتا۔ تماشائی اس کے نام کے نعرے ...

تفصیل پڑھیں

وہ پہلوان جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر 18

میراں بخش نے راجہ کا حکم پاتے ہی آرام طلبی کا لبادہ اتار پھینکا اور بھاگم بھاگ امرتسر میں اپنے آبائی اکھاڑے بھکی والاباغ اکالیاں میں پہنچ کر زور و شور سے تیاری شروع کر دی۔وقت کم اور مقابلہ خطرناک تھا لہٰذا تیاری کرانے کے لیے میراں بخش کے والدامیر بخش ،بڑا چچا عزیز الدین اور ...

تفصیل پڑھیں

وہ پہلوان جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر 17

کلو پہلوان نے کیکر سنگھ کو دعوت مبارزت دی اور1903ء میں امرتسر میں دونوں پہلوان ایک دوسر ے کے سامنے آگئے!کلو پہلوان نے کیکر سنگھ کی غضبناکی اوروحشت کو ہوا دینے کے لئے اسے مکے مارنے شروع کر دیئے اور مار مار کر اس کا یہ حال کر دیا کہ وہ منصف سے یہ کہنے پرمجبور ہو گیا۔’’دیکھیں ...

تفصیل پڑھیں

معروف پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر15

ناقابل تسخیر کو مسخر کرنا ایسا کارنامہ تھا جس پر مسرت سے زیادہ حیرت و استعجاب کا اظہار کیا گیا۔ مہاراجہ نے حسب وعدہ غلام پہلوان کو انعامات سے نواز اور غلام پہلوان کو رستم ہند کا خطاب دیا۔ہندوستان کی تمام ریاستوں میں اس معرکہ آرائی کی خبر ہوئی اور غلام پہلوان کی شہرت خوشبو کی ...

تفصیل پڑھیں

معروف پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر14

مہاراجہ پر تاب سنگھ کے تمام درباری گردنیں موڑ موڑ کر اس چھریرے بدن کے نوجوان کو دیکھ رہے تھے جو اپنے ساتھی پہلوانوں کے حلقے میں بیٹھا تھا۔غلام پہلوان نے تھوڑی دیر پہلے ہی مہاراجہ کے چہیتے پہلوان اور رستم ہند کیکر سنگھ کو چیلنج کر دیا تھا اور ساتھ ہی ایک لاکھ روپیہ انعام کشتی ...

تفصیل پڑھیں

معروف پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر13

مہاراجہ کھنڈے راؤ کی ایک منظور نظر طوائف رمزی پہلوان کی شہرت سے خائف تھی۔وہ رمزی پہلوان کو راجہ کی نظر سے گرانا چاہتی تھی اور کسی موقع کی تاک میں بیھی تھی۔رمزی بڑھاپے کی طرف گامزن تھے کہ بوٹا پہلوان رستم ہند بھی لاہور سے بڑودہ چلے آئے۔بوٹا پہلوان جتنے شاہ زور تھے اسی قدر حسین ...

تفصیل پڑھیں

معروف پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر12

کیکر سنگھ نے ہندوستان کے بہتیرے اکھاڑوں میں جاکرزور کئے مگر اس کو مراد نہ ملی۔آخر اسے معلوم ہوا کہ استاد بوٹا پہلوان رستم ہند اس پائے کے شاہ زور ہیں جو اسے زور کراسکتے ہیں۔ایک روز استاد بوٹا لاہور کے اکھاڑے میں آئے تو کیکر سنگھ کو خبر ہو گئی۔اس نے اپنی چادر اٹھائی اور ملنے کے ...

تفصیل پڑھیں

معروف پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر11

اگرچہ کیکرسنگھ کا باپ جوالا سنگھ سندھو بھی ایک جاٹ زمیندارتھا اور اس کے ہاں بھی دودھ گھی وافر مقدار میں موجود تھا لیکن سنگھ جاٹوں نے کیکر سنگھ کی حوصلہ افزائی کے لئے ان کے دروازہ پر بھینسوں کی قطارکھڑی کر دی اور ہندو تاجروں نے باداموں کی بوریاں کیکر سنگھ کے گھر میں رکھوا ...

تفصیل پڑھیں

معروف پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر10

میراں بخش بھکی والا بھی جدی پشتی پہلوان تھا۔ امرتسر کے یہ شاہ زور پہلوانی کی تاریخ میں بہت بلند مقام رکھتے تھے۔ اس خاندان کے سترہ جوانوں نے شاہ زوری کی تاریخ میں اپنانام اور مقام بنایا۔ بھکی خاندان کے یہ پہلوان ہندوستانی ریاستوں اندور، بڑودہ ،جموں دربار، مرشد آباد دربار اور ...

تفصیل پڑھیں

معروف پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی۔ ۔ ۔ قسط نمبر9

ریاست دتیہ پہنچنے پرراجہ بھوانی سنگھ نے اپنے شاہ زوروں کا شایان شان استقبال کیا اور ساری ریاست میں گاماں کے آنے پر جشن سا برپارہا۔راجہ بھوانی سنگھ بھی پہلوانوں کا عجیب طرح سے شیدائی تھا۔ وہ تو پہلوان کو اپنے گروؤں کی طرح پوجتا تھا لٰہذا گامے کی آمد پر وہ سر شار ہو گیا۔وہ گاماں ...

تفصیل پڑھیں

پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی ۔ ۔ ۔ قسط نمبر 8

جس روز سے حضرت فیتے شاہ نے گاماں کے حق میں کلمہ خیر کہا تھااس کے بعد جب تک گاماں ریاست جودھپورمیں رہا، اسے کوئی ڈراؤنا خواب نہ آیا۔ریاست جودھپور میں اب گاماں اور امام بخش کا دانہ پانی ختم ہو گیا تھا۔ ابھی انہوں نے اپنی چار سالہ فنی تعلیم مکمل کی ہی تھی کہ مہاراجہ جسونت سنگھ فوت ...

تفصیل پڑھیں

پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی ۔ ۔ ۔ قسط نمبر 7

عیداپہلوان نے باقی وقت آنکھوں میں کاٹا۔ سحری سے قبل اس نے دونوں بھائیوں کو اٹھایا اور جانگئے پہناکر ریاضت کے لئے اکھاڑے میں لے گیا جہاں استاد مادھو سنگھ حسب معمول منتظر تھا۔مادھو سنگھ مردم شناس ہی نہیں رمز شناس بھی تھا۔ اس نے عیداپہلوان کے چہرے پر تیرتی پریشانی بھانپ لی اور ...

تفصیل پڑھیں

پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی ۔ ۔ ۔ قسط نمبر 6

گاماں نو برس اور امام بخش ساڑھے چار برس کاہو چکا تھا جب ایک روز راجہ بھوانی سنگھ دونوں بھائیوں کو اکھاڑے میں ملنے آیا۔ عیدا پہلوان اور بوٹا پہلوان اپنے بھانجوں کو داؤد پیچ سکھا رہے تھے۔ راجہ ہمیشہ کی طرح ’’مزار عزیز‘‘ کے اکھاڑے میں اپنے عزیز پہلوان کے کم سن سپوتوں ...

تفصیل پڑھیں

پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی ۔ ۔ ۔ قسط نمبر 5

مہاراجہ ننھے گاماں کی ہر خواہش پوری کرتاتھا۔ رفتہ رفتہ گامے کا صدمہ ختم ہوتا چلاگیا۔ عزیز بخش کی وفات کے تین ماہ بعد امام بخش (بھولو کا والد) پیدا ہوا۔ گاماں اپنے نومولود بھائی کے ساتھ ایسا مصروف ہوا کہ باپ کی کمی جاتی رہی۔ اسیطرح ایک سال بیت گیا۔ گاماں اور امام بخش کی پرورش کی ...

تفصیل پڑھیں

شریعت و طریقت کا علم بلند کرنے والی عظیم ہستی۔ ۔ ۔ آخری قسط

حاجی عبدالرحیم دلشاد نوشاہی نے حضرت ابو الکمال برقؒ سے سلسلہ نوشاہیہ کی خلافت حاصل کی تھی اور پھر آپؒ کی ہدایت پر طریقت کو اس کے شرعی تقاضوں اور اصولوں کے مطابق تبلیغ کا ذریعہ بنا کر سالکین کی ظاہری و باطنی خدمت کرتے آ رہے ہیں۔ وہ 1957ء میں برطانیہ آئے تھے۔ ان کے والد اور دادا ...

تفصیل پڑھیں

پہلوانوں کی داستانیں جنہوں نے اپنے اپنے دور میں تاریخ رقم کی ۔ ۔ ۔ قسط نمبر 4

حویلی کے گرد ایک بہت بڑی اور مضبوط فصیل کھڑی تھی۔ عزیز پہلوان ریاضت کی غرض سے رات کے پچھلے پہر اٹھ کر فصیل کی جانب چلا جاتا تھا۔وہ ایک چاندنی رات تھی۔ ہوا میں خنکی کا احساس نمایاں تھا۔ حویلی کے باغ میں فصیل کے ساتھ کیاریوں میں کھلے پھول اور چھوٹے پودے چاندنی کی دودھیا روشنی میں ...

تفصیل پڑھیں