تازہ ترین

ای پیپر

نجم ولی خان

نجم ولی خان

وکلاء کو استعمال کرنے کی سازش

یہ سیاسی مقاصد کے لئے وکلاء کو استعمال کرنے کی سازش کون کر رہا ہے، منتخب آئینی وزیراعظم سے استعفے کے لئے ہڑتالوں کی کال دی جا رہی ہے، یہ درست کہ آئین اور جمہوریت کی بحالی کے لئے وکلاء نے ہر جمعرات کو نکالی جانے والی ریلیوں پر مشتمل ایک تحریک چلائی، یہ تحریک اس عدلیہ کی بحالی کے ...

تفصیل پڑھیں

ناز بلوچ کام کی نہیں تھیں ؟

ناز بلوچ نے تحریک انصاف چھوڑ دی، وہ برسوں اس پارٹی کے ساتھ رہیں، ٹی وی پروگراموں ہی نہیں بلکہ نجی محفلوں تک میں اپنے لیڈر کا دفاع کرتی رہیں، تبدیلی کے خواب دکھاتی رہیں،ا س تبدیلی کے خواب جس کی بات کرتے کرتے، ان کے مطابق، تحریک انصاف خود تبدیل ہو گئی۔ ناز بلوچ کے پارٹی چھوڑنے پر ...

تفصیل پڑھیں

میں جس نواز شریف کو جانتا ہوں

نقل کفر کفر نہ باشد ،مجھے فون پر ایک سینئر جرنلسٹ کا پیغام موصول ہوا،لکھا تھا کہ احتیاطی تدبیر کے طور پر وزیراعظم نے اپنے استعفے اور ریاستی میڈیا پر خطاب کے ڈرافٹ کی منظوری دے دی ہے۔ ان کی تقریر ریکارڈ ہو چکی اور اس کی کاپی ایک نجی چینل کو بھی دی جا چکی ہے۔اس مبینہ ڈرافٹ اور ...

تفصیل پڑھیں

چودھری صاحب

عین ممکن ہے کہ چودھری نثار علی خان درست کہہ رہے ہوں کہ وزیراعظم محمد نواز شریف کی پولیٹیکل اور لیگل ٹیموں نے مقدمہ درست انداز میں نہ لڑا ہو، یہ بھی درست ہو سکتا ہے کہ وزیراعظم کو اب صرف کوئی معجزہ ہی بچا سکتا ہو کہ چودھری صاحب کو اس مرتبہ سکرپٹ دھرنوں سے بھی زیادہ مضبوط اور ...

تفصیل پڑھیں

’’مجھے جے آئی ٹی پر فخر ہے‘‘

اگر سپریم کورٹ کی طرف سے تلاش کئے گئے ہیروں کی صرف ساٹھ روز میں دکھائی گئی محیر العقول اور فقید المثال کارکردگی کو دیکھتے ہوئے آپ کی آنکھوں میں خوشی سے آنسو نہیں آتے، آپ خود کو اس محنتی اور فرض شناس قوم کاایک فرد سمجھتے ہوئے ایک عظم احساس تفاخر کے ساتھ شکرانے کے نوافل ادا کرنے ...

تفصیل پڑھیں

جے آئی ٹی کی دس جلدیں

ٹوئیٹر پر ٹرینڈ چل رہا ہے، ’ گیم اوور نواز‘، ٹوئیٹر نے بتایاکہ بابر اعوان اور سینیٹر رحمان ملک بھی اس بارے ٹوئیٹنگ کر رہے ہیں، مَیں نے بھولے سے کہا کہ وہ باہر جائے اور دیکھے کہ مسلم لیگ(ن) کی حکومت قائم ہے یا ختم ہو گئی ہے،بھولا سوشل میڈیا کی دنیا سے باہر گیا تو اسے پتا چلا ...

تفصیل پڑھیں

مسلم لیگ نون نے غلطی کہاں کی؟

وزیراعظم محمد نواز شریف ملکی سیاست میں جمہوریت اور ترقی کا استعارہ بن گئے ہیں جبکہ ان کے مخالف سازشوں کا، بہت سارے اس بات پر اسی کی دہائی میں لے جاتے ہیں جب ضیاء الحق مرحوم نے انہیں وزیر خزانہ اور پھر پنجاب کا وزیراعلیٰ بنایا مگر یہ تو کم و بیش تیس برس پرانی باتیں ہیں، وہ جان ...

تفصیل پڑھیں

نام نہادنہیں بے چاری جمہوریت

پاکستان کے سیاسی ماضی کی تلخیو ں سے نابلد اور ناآشنا میڈیائی دانشوروں کے مرغوب الفاظ’ نام نہاد جمہوریت ‘ ہیں، جن کے ذریعے وہ آمریت کے مفادات کی جگالی کرتے اور جن لوگوں نے ایوب ، ضیاء یا مشرف کے آمرانہ ادوار دیکھے اور بھگتے ہیں، ان کے ذہنوں اور لہجوں میں خواہ مخواہ تلخی ...

تفصیل پڑھیں

’’ مدعی لاکھ برا چاہے‘‘

برق لکھنوی نے ڈیڑھ سو برس پہلے ہی کہہ دیا تھا، ’مدعی لاکھ برا چاہے تو کیا ہوتا ہے، وہی ہوتا ہے جو منظور خدا ہوتا ہے‘، اکبر الہ آبادی کی زبان میں مدعی کو رقیب سمجھ لیں،کہا، ’رقیبوں نے رپٹ لکھوائی ہے جا جا کے تھانے میں، کہ اکبر نام لیتا ہے خدا کا اس زمانے میں‘۔ مجھے یہ ...

تفصیل پڑھیں

’’ بُغضِ نوازمرض ہے‘‘

بغض نواز مرض ہے ، یہ موروثی بھی ہوسکتا ہے اور وائرل بھی،برائلردانش سے بھی اسی طرح پیدا ہوسکتا ہے جس طرح برائلر مرغیاں ہوتی ہیں، اپنے پاوں پر کھڑی نہیں ہوسکتیں مگر ان کے گوشت کی گندی اور بد بودار دکانیں ہر چوک میں کھلی ہوتی ہیں اور رش لے رہی ہوتی ہیں، جعلی دانش کے مرض میں مبتلا ...

تفصیل پڑھیں

’’دی کنٹریکٹر‘‘

یہ غالباً ستائیس جنوری 2011 کی دوپہر تھی جب میں سروسز ہسپتال کی ایمرجنسی میں ایک کولیگ کی عیادت کے لئے پہنچا تھا، ہمارے ساتھی رپورٹر لاہور میں تجاوزات کے خلاف ہونے والے ایک آپریشن میں کوریج کے دوران پتھراؤ سے زخمی ہو گئے تھے،ٹراما سنٹر میں غیر معمولی رش تھا،میرے ساتھ پروگرام ...

تفصیل پڑھیں

لاوارث خیبرپختونخوا

عید سے دو روز قبل جب میں شوگران کے اس ہوٹل میں پہنچا جو کیوائی سے آٹھ کلومیٹر اوپراس پہاڑی پر واقع تھا جہاں محکمہ جنگلات کے ریسٹ ہاوس میں بڑا سا ہیلی کاپٹر پر پھیلائے کھڑا تھا، ریسٹ ہاوس کا وسیع میدان کالی وردی والوں کے گھیرے میں تھا اور وی وی آئی پی موومنٹ کے ہاعث معمول کے ...

تفصیل پڑھیں

’’کاش یہ عیدی بلال کو مل جاتی‘‘

پیپلزپارٹی کو برا بھلاکہنا تو اس وقت فیشن میں ’ان‘ ہے، میرا تو پیپلزپارٹی سے اس کے چند ایک رہنماوں اور کارکنوں سے ہٹ کے کوئی قابل ذکر تعلق کبھی نہیں رہا ، یہ تعلق بھی اس وقت مزید کمزور ہوجاتا ہے جب میں کسی بھی سیاسی جماعت کے تین بنیادی اجزا یعنی نظریات، کارکردگی اور ...

تفصیل پڑھیں

سیاست ، کھیل اورجنگ

سیاست اور کھیل ، جنگ نہیں ہوتے (مگر انہیں جنگ بناد یا جاتا ہے)۔ جنگ تو شروع ہی وہاں ہوتی ہے جہاں سیاست ناکام ہوجائے، سیاستدان ناکام ہو جائیں، دنیا بھر کی تاریخ اٹھاکے پڑھ لیں کہ جب جنگ ختم ہوجاتی ہے تو ایک مرتبہ پھر سیاست ہی شروع ہوتی ہے۔ تاریخ ایسے سیاستدانوں سے بھری پڑی ہے جو ...

تفصیل پڑھیں

’’علامے ہی علامے ہیں‘‘

چھوٹے چھوٹے بچے مسجد میں شور کر رہے تھے، جماعت کھڑی ہوئی تو انہوں نے ہال میں کھیلنا شروع کر دیا، امام صاحب برہم ہو ئے اور بولے، انہیں گھر چھوڑ آئیں۔ مولوی کو ہمیشہ غلط سمجھنے والے برائلر دانشوراس بات پر برس پڑے، کہنے لگے اگر بچوں کو اسی طرح جھڑک کے نکالا جاتا رہا تو وہ مسجدوں ...

تفصیل پڑھیں

آئیں حساب کر لیتے ہیں!

یہ پاکستان کی سیاسی تاریخ کا اہم دن ہے جب پاکستان کے منتخب آئینی وزیراعظم کو ان کے خاندانی کاروبار اور جائیداد پر حساب دینے کے لئے ایک چھ رکنی تفتیشی ٹیم کے سامنے پیش کیا گیا ہے اور اگر خان صاحب اسے اپنی کامیابی سمجھتے ہیں تو یہ بہترین موقع ہے کہ ایک مرتبہ پھر جمع ، تفریق کر لی ...

تفصیل پڑھیں

جے آئی ٹی فریق ہے؟

میری قومی تاریخ ایسے ڈھیر سارے مقدموں سے بھری پڑی ہے جن میں سمجھا یہ جاتا رہا ہے کہ فیصلہ کمرہ عدالت میں بیٹھے منصف کریں گے ، ہاں، وقتی طور پر یہی ہوا کہ فیصلہ کورٹ روم میں بیٹھے ججوں نے ہی لکھا اور اسے اخبارات و جرائد میں عدالت میں بیٹھی ہوئی شخصیات سے ہی منسوب کیا گیا مگر ان ...

تفصیل پڑھیں

رمضان بھرا کالم

جب مَیں، آپ اور ہم سب روزہ افطار کرتے ہوئے پکوڑے، سموسے، کچوریاں، فروٹ چاٹ اور دہی بھلوں سمیت سب کچھ چٹ کر جاتے ہیں تو یقینی طور پرہمارے معدے حیران اور پریشان رہ جاتے ہوں گے کہ بھلا سولہ گھنٹوں کے قریب آرا م دے کر افطارمیں ہضم کرنے کااتنا کام دے دیا ہے جو اگلے سولہ گھنٹوں میں ...

تفصیل پڑھیں

مائنس ون فارمولا

خیال تھا کہ اسٹیبلشمنٹ نے مائنس ون فارمولے پر کام بند کر دیا گیا ہو گا کہ چیف آف آرمی سٹاف سمیت اعلیٰ قیادت سیاست میں مداخلت کی قائل نہیں مگر یوں لگتا ہے کہ پہلے والی موٹی اور بھاری اسٹیبلشمنٹ نے بہت سارے انڈے دے رکھے ہیں جن سے بچے نکلتے رہتے اور اپنا کام فطرت میں موجود مستقل ...

تفصیل پڑھیں

عدالت اور سیاست

عدالت کو سیاست سے اور سیاست کو عدالت سے باہر رہنا چاہئے، تما م مہذب معاشروں کی یہی روایت اور عادت ہے، مگر اس کا کیا علاج ہے کہ ایسے تمام مقدمات جن کا تعلق سیاست دانوں سے ہوتا ہے وہ چاہے ذاتی ہوں، مالی ہوں یا انتظامی، سب کے سب سیاسی ہی بن جاتے ہیں۔ حقیقت تو یہ ہے کہ اگر عدالتیں ...

تفصیل پڑھیں