مصر، خواتین نیوز اینکرز کے بعد ایئر ہوسٹس کو بھی حجاب پہننے کی اجازت مل گئی

صفحہ آخر


قاہرہ(اےن اےن آئی)مصر میں معزول سابق صدر سید حسنی مبارک کے تیس سالہ سیکولر دور حکومت کے خاتمے کے بعد سرکاری اداروں سے بھی لادینیت کا رنگ تیزی سے زائل ہونا شروع ہو گیا ہے۔ حال ہی میں مصری ٹیلی ویژن چینل کی خواتین نیوز اینکرز کی جانب سے حجاب پہننے کے اعلانات کے بعد قومی فضائی کمپنی سے وابستہ کئی ایئر ہوسٹس نے بھی ڈیوٹی کے دوران حجاب پہننے کے لیے درخواستیں دی ہیں۔ دوسری جانب انتظامیہ نے حجاب کی خواہش مند لڑکیوں کو ان کی مرضی کا حجاب اوڑھنے کی اجازت دے دی ہے۔ مصری وزیر برائے فضائی نقل وحمل سمیر امبابی کے زیر صدارت ایئر لائن انتظامیہ کا ایک اہم اجلاس ہوا۔ اجلاس میں نئی بھرتی ہونے والی ایئر ہوسٹس کی فہرست کو حتمی شکل دی گئی۔ اس موقع پر اجلاس میں دوران ڈیوٹی حجاب پہننے کی خواہش مند ایئر ہوسٹسز کی بھی فہرست پیش کی گئی۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ کوئی بھی ایئر ہوسٹس ڈیوٹی کے دوران حجاب پہن سکتی ہے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ نئی بھرتی کی گئی 70 ایئر ہوسٹس اپنی ذمہ داریاں سنھبالنے کے لیے تیار ہیں جبکہ 172 کی خصوصی تربیت جاری ہے انہیں بھی جلد ازجلد فضائی کمپنی میں شامل کر لیا جائے گا، اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ سابق حکومت کے دور میں ایئر ہوسٹس کی بھرتیوں اور ان پر عائد دیگر پابندیوں کو اب ختم کر دیا گیا ہے اور کسی بھی ائیر ہوسٹس کو کسی مخصوص لباس کی پابندی کا حکم نہیں دیا جائے گا۔