سعودی حکومت نے غیر قانونی تارکین کو وطن واپسی کیلئے 90 دن کی مہلت دیدی

صفحہ آخر


مکہ مکرمہ ( این این آئی) سعودی حکومت نے اقامہ و محنت حج و عمرہ و زیارۃ اور ٹرانزٹ کے قوانین کی خلاف ورزی کرنیوالوں کو اصلاح حال اور بلا جرمانہ وطن واپسی، سزاؤں سے معافی اور ملازمت کے ویزے پر مملکت واپسی کا موقع فراہم کرنے کیلئے 90دن کی مہلت دیدی جس پر عملدرآمد یکم رجب 1438ھ مطابق 29مارچ 2017ء سے ہوگا۔ ولی عہد ، نائب وزیراعظم و وزیر داخلہ شہزادہ محمد بن نایف نے گزشتہ روز ریاض کے اپنے دفتر سے شاہی مہلت کا اعلان کرتے ہوئے واضح کیاکہ خادم حرمین شریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے ’’غیر قانونی مقیمین سے پاک وطن ‘‘ مہم کی منظوری دیدی۔ کفیل خروج نہ لگوائے تو شعبہ ترحیل میں ایگزٹ لگوایا جاسکے گا۔ مہلت کے دوران سفر نہ کرنیوالے سے جرمانہ اور فیس وصول کی جائے گی، ترجمان وزار ت داخلہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ عام معافی کے دوران جانے والے غیر قانونی تارکین وطن دوبارہ کسی بھی ویزے پر مملکت آسکتے ہیں۔ مہلت کے دوران وطن لوٹنے والوں پر کسی قسم کا جرمانہ عائد نہیں کیا جائیگا۔ وزارت داخلہ کی جانب سے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر جاری تفصیلی بیان میں کہا گیا کہ مملکت میں اقامہ قوانین کی خلاف ورزی کے مرتکب ایسے تارکین جو عمرہ ، حج یا وزٹ ویزے پر آکر غیر قانونی طور پر مقیم ہو گئے وہ 90 دن کی مہلت کے اندر سعودی عرب سے روانہ ہوجائیں ۔تارکین اپنی سیٹ کنفرم کروا کر براہ راست ائیر پورٹ جاسکتے ہیں جہاں سے انکا خروج ( ایگزٹ ) لگ جائے گا۔