ڈاہرانوالہ: مسلح افراد کی خاوند کے سامنے خاتون سے اجتماعی زیادتی

جرم و انصاف

ڈاہرانوالہ (ویب ڈیسک) ڈاہرانوالہ کے قریبی گاﺅں چک نمبر 129 مراد میں فروٹر کے باغ میں تین مسلح ملزمان کا اسلحہ کے زور پر خاوند کی موجودگی میں خاتون کے ساتھ گینگ ریپ کیا گیا، خاتون کے شور اور واویلا کرنے پر ملزمان رات کی تاریکی کا فائدہ اٹھاتے ہوئے موقع سے فرار ہوگئے۔ خاتون کی رپورٹ پر ملزمان کے خلاف مقدمہ درج، ڈی ایس پی چشتیاں شمس الدین خاں کو واقعہ کا علم ہونے پر ڈاہرانوالہ پولیس ان ایکشن ۔ ایس ایچ او چوہدری محمد رفیق کی کاوشوں سے ملزمان کو گرفتار کرلیا گیا۔

روزنامہ خبریں کے مطابق خاتون مسماة رضیہ پروین ولد محمد اشرف سکنہ چک نمبر 129 مراداضافی بستی نے ڈاہرانوالہ پولیس کو دی گئی تحریری درخواست میں وقوعہ کی تفصیلات بتاتے ہوئے لکھا کہ میرے خاوند محمد اشرف نے ظہور حسین ولد حافظ محمد سلیم قوم آرائیں سکنہ 129 مرادسے چار ایکڑ باغ فروٹر ٹھیکہ پر لیا ہوا ہے اور باغ کے اندر ہی ایک چار دیواری کے بغیر کمرہ میں رہائش رکھی ہوئی ہے۔ 6 اور 7 جون کی درمیانی شب مَیں میرا خاوند اور ملزام الگ الگ چار پائیوں پر سورہے تھے کہ رات کے تقریباً دو بجے تین مسلح اشخاص جن میں سے ذیشان اور محمد فاروق کو ٹارچ کی روشنی میں مسلح پسٹل آتے شناخت کیا ، آتے ہی ملزمان میرے خاوند اور ملزم کو اسلحہ کے زور پر کمرہ میں لے گئے اور ان کے ہاتھ پاﺅں باندھ کر ملزمان ذیشان اور محمد فاروق نے مجھے اسلحہ کے زور پر باری باری زیادتی کا نشانہ بنایا جبکہ تیسرا نامعلوم شخص چند قدم کے فاصلے پر نگرانی کرتا رہا۔

اس دوران میرے شور اور واویلا کرنے پر دیگر لوگوں کو آتا دیکھ کر ملزمان رات کی تاریکی کا فائدہ اٹھا تے ہوئے موقع سے فرار ہوگئے۔ ڈاہرانوالہ پولیس نے خاتون مسماة رضیہ پروین زوجہ محمد اشرف کی درخواست پر ملزمان ذیشان ولد فلک شیر ذات تیلی سکنہ 130 مراد، محمد فاروق ولد مختارذات نئی سکنہ 171 مراد اور ایک نامعلوم شخص کے خلاف زیر دفعہ 376 ت پ مقدمہ نمبر 207/17 درج کرلیا۔ ڈی ایس پی چشتیاں شمس الدین خاں اور تھانہ ڈاہرانوالہ کے ایس ایچ او چوہدری محمد رفیق کی کاوشوں سے پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ملزمان کو گرفتار کرکے حوالات میں بند کردیا۔