بچوں کی برہنہ فلمیں بنانے والا شخص جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کے سپرد، ایک ویڈیو 200یورومیں بکتی تھی: ملزم نے اعتراف کرلیا

جرم و انصاف

لاہور،سرگودھا (ویب ڈیسک) بچوں کی برہنہ فلمیں تیار کرکے انہیں دنیا کے مختلف ممالک میں فروخت کرنے کے الزام میں گرفتار شخص کو مزید پانچ روزہ جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کے حوالے کردیاگیا ہے جبکہ ملزم سعادت نے اعتراف کیا ہے کہ ایک ویڈیو کے 100سے 200یوروملتے تھے ۔
تفصیلات کے مطابق ایف آئی اے نے سرگودھا کی سوسائٹی کالونی میں چھاپہ مار کر سعادت حسن سعادت حسن منٹو نامی شخص کو حراست میں لے لیا اور ملزم کے کمرے میں موجود سٹوڈیو سے بڑی تعداد میں بچوں سے بدفعلی کی ویڈیو فلمیں تین کمپیوٹرز کی ہارڈ ڈسکس 42 انچ کی ایل ای ڈی اور سامان قبضے میں لے لیا۔ ناروے کے سفارتخانے کی طرف سے کی گئی شکایت پر ایف آئی اے حکام نے کارروائی کی تھی جبکہ ملزم کا تعلق سکینڈی نیویا کے بدنام زمانہ گروہ ڈارک روم سے ہے۔ ملزم بچوں کی غیراخلاقی وڈیوز بیرون ملک فروخت کرتا تھا، سرگودھا سے گرفتارملزم سعادت نے کئی راز ا±گل دیئے، کمرہ کرائے پر لے رکھا تھا جبکہ علاقے کے بچے اسے منٹو انکل کے نام سے جانتے ہیں، ملزم سعادت نے اپنے اعترافی بیان میں بتایا ہے کہ وڈیوز کے 100سے 200 یورو ملتے ہیں، مکروہ دھندے میں ایک کارندہ منڈی بہاءالدین میں بھی موجود ہے جو بچوں کو ورغلانے میں معاون تھا۔
ایک بچے نے بتایاکہ منٹو انکل سب بچوں سے کام کرواتے تھے ، دوربینیں دکھاتے تھے اور کہتے تھے کہ سی آئی ڈی ہوں ، جرمنی سے آیا ہوں۔ یہ بھی انکشاف ہوا ہے کہ ملزم نے لوگوں کی ہمدردیاں سمیٹنے کے لیے خود کو بلڈ کینسر کا مریض ظاہر کیا ہوا تھا تاہم گرفتاری کے بعد سے اس کرائے کے گھر پر بھی تالے پڑے ہیں۔گھناو¿نے دھندے سے متعلق مزید انکشافات بھی ہوئے، جس کے مطابق سکینڈینیوین ممالک میں ڈارک روم نامی گروہ اکتیس مقامات پر کام کررہا ہے جس کے خاتمے کے لئے اسی نام سے آپریشن شروع ہوا ہے، یہ گروہ ننھے بچوں کی غیر اخلاقی ویڈیو بناتا تھا۔
دوسری طرف ضلع کچہری لاہورکے جوڈیشل مجسٹریٹ نے کمسن بچوں کو جنسی بے راہروی کا نشانہ بنانے والے ملزم کو 5روزہ جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کی تحویل میں دے دیا ہے۔ جوڈیشل مجسٹریٹ فاروق اعظم سوہل کے روبرو ایف آئی اے کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر آصف اقبال نے ملزم سعادت امین کو نارویجن پولیس لائزن آفیسر رائے لینڈوت کی درخواست پر مقدمہ درج کر کے گرفتار کر کے پیش کیا، تفتیشی افسر نے عدالت کو آگاہ کیا کہ ملزم 10سے 12سال کے بچوں سے مبینہ طور پربداخلاقی کر کے ویڈیوز بنا کر بیرون ملک فروخت کرتا رہا ، تفتیشی افسر نے مزید بتایا کہ ملزم نے کمسن بچوں کی قابل اعتراض تصاویر اور ویڈیوز نارویجن شہری لینڈ سٹروم کو بھجوائیں، تفتیشی افسر نے کہا کہ چھاپے کے دوران ملزم کے قبضہ سے کمسن بچوں کی 5 ہزار سے زائد ویڈیوز اور تصاویر برآمد کی گئی ہیں اور ملزم نے ابتدائی تفتیش میں اپنے جرم کا اعتراف بھی کیا ہے۔ تفتیشی افسر نے عدالت کو یہ بھی بتایا کہ ملزم کے قبضہ سے لیپ ٹاپ، کمپیوٹر کی پانچ ہارڈ ڈسکس اور موبائل بھی برآمد کیا گیا ہے، ایف آئی اے کے تفتیشی افسر نے استدعا کی کہ ملزم سے مقدمہ کی تفتیش اور اس کے گینگ کے مزید ساتھیوں کی گرفتاری کے لئے 14روزہ جسمانی ریمانڈ دیا جائے۔ عدالت نے دلائل سننے اور ریکارڈ دیکھنے کے بعد ملزم سعادت علی کو 5روزہ جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کی تحویل میں دے دیا۔