’انسان کے بدن میں یہ چیز ڈال دی جائے تو وہ ہمیشہ زندہ اور جوان رہ سکتا ہے‘ سائنسدانوں نے اعلان کردیا، کیا کرنے لگے ہیں؟ آپ سوچ بھی نہیں سکتے

ڈیلی بائیٹس

نیویارک(نیوز ڈیسک)آج کے دور میں کوئی 100 سال کی عمر کو پہنچ جائے تو اسے بڑی بات سمجھا جاتا ہے لیکن سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ اب وہ وقت دور نہیں کہ انسان کم از کم 200 سال تو ضرور جیا کریں گے۔ یہ دعویٰ کرنے والے سائنسدان ایک نئے طریقہ علاج پر تحقیق کررہے ہیں جس میں پہلی بار ’سٹیم سیل تکنیک‘ کو انسانوں پر آزمایا جا رہا ہے۔
ڈیلی سٹار کے مطابق تحقیق کاروں کا کہنا ہے کہ ’سٹیم سیل تکنیک‘ کی مدد سے انسان کے جسم میں پرانے خلیوں کی جگہ نئے خلئے داخل کر کے اس کی جوانی پھر سے بحال کی جا سکتی ہے۔نئے خلیوں کی مدد سے عمر بڑھنے کی رفتار سست ہو جائے گی اور بیماریوں سے بھی نجات ملے گی۔ سٹیم سیل (stem cells) وہ بنیادی خلیات ہوتے ہیں جو بعد ازاں تبدیل ہو کر جسم کے مختلف اعضاءکا حصہ بنتے ہیں۔
برطانیہ کے سٹیم سیل بینک ’سٹیم پروٹیکٹ‘ کا کہنا ہے کہ ان تجربات کی کامیابی اس بات کی ضمانت ہوگی کہ انسان کی عمر تقریباً 200 سال تک بڑھائی جاسکتی ہے۔ درجن بھر افراد پر یہ تجربات پہلے ہی شروع ہوچکے ہیں اور ان افراد نے اپنی صحت و توانائی میں نمایاں بہتری محسوس کی ہے۔

سائنسدانوں نے مستقبل دیکھنے والا روبوٹ تیار کر لیا، نجومیوں کی چُھٹی ہو گئی
سٹیم پروٹیکٹ سے تعلق رکھنے والے سائنسدان مارک ہال نے بتایا ”بنیادی طور پر یہ تکنیک کافی سادہ ہے۔ جیسا کہ ہم جسم کے کسی جوڑ یا عضو کو خراب ہونے کی صورت میں بدل سکتے ہیں اسی طرح سٹیم سیل تکنیک کے ذریعے ہم انسانی خلیات کو بھی بدل سکتے ہیں۔ اس تکنیک کے ذریعے پرانے اور کمزور خلیات کی جگہ جسم میں نئے اور توانا خلیات داخل کردئیے جائیں گے۔ اس طرح بوڑھا ہوتا ہوا جسم پھر سے جوان ہوجائے گا۔ صرف عمر رسیدہ خلیات ہی نہیں بلکہ بیماری کے شکار خلیات کو بھی نئے اور صحت مند خلیات سے بدلنا ممکن ہوگا۔ اس طرح جسم کو لاحق کئی طرح کی بیماریوں کا بھی سٹیم سیل تکنیک سے خاتمہ ممکن ہوگا۔“ ابتدائی تجربات 15 معمر افراد پر کئے گئے جن کی اوسط عمر 78 سال تھی۔ ان سب نے نئی تکنیک کے استعمال سے اپنی صحت اور توانائی میں بہتری دیکھی۔ اس کے بعد 30 مزید افراد پر کئے گئے تجربات میں بھی اس تکنیک کو موثر پایا گیا ہے۔

ڈیلی پاکستان کے یو ٹیوب چینل کو سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں
اس تکنیک میں سٹیم خلیات کو ہڈیوں کے گودے، چربی یا خون سے لیا جاتا ہے اور پھےر انہیں ضرورت کے مطابق مختلف اقسام کے خلیات میں تبدیل کرکے انسان کے جسم میں داخل کیا جاتا ہے۔ سائنسدانوں کو امید ہے کہ اس تکنیک سے نہ صر ف انسان کی عمر میں اضافہ ہوگا بلکہ دل، دماغ، ہڈیوں اور دیگر کئی اعضاءکی بیماریوں کا علاج بھی کیا جاسکے گا۔