وہ خاتون جس نے اپنی گاڑی فروخت کرکے ایسا کام کیا کہ تھوڑے ہی دنوں میں کروڑ پتی بن گئی، دنیا کو حیران کردیا

ڈیلی بائیٹس

میلبرن(نیوز ڈیسک) بڑے کاروبار کے پیچھے عموماً بہت بڑی سرمایہ کاری بھی ہوتی ہے لیکن ایک آسٹریلوی خاتون نے تو کمال ہی کر دیا، یہ موصوفہ اپنی پرانی کار بیچ کر دنیا بھر میں کروڑوں ڈالر کا بزنس قائم کر چکی ہیں۔
میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق 32 سالہ جیس تھامس نے نیا کام شروع کرنے کے لئے 2004 اپنی ٹیوٹا کرولا گاڑی 5000 ڈالر(تقریباً 5 لاکھ پاکستانی روپے) میں فروخت کی لیکن آج وہ دنیا کے متعدد ممالک میں موجود ’ہیلتھ لیب‘ کمپنی کی مالکن ہیں۔جیس کا کہنا ہے کہ جب وہ ایک دفتر میں ملازمت کرتی تھیں تو روزانہ دوپہر کے وقت چاکلیٹ کھایا کرتی تھیں۔ وہ روز بازاری میٹھا کھانا پسند نہیں کرتی تھیں لیکن کوئی اور مناسب چیز بھی دستیاب نہ تھی۔ ایک دن انہوں نے فیصلہ کیا کہ گھر سے پروٹین بھری پنیاں بنا کر دفتر لے جائیں گی۔ یہ آئیڈیا تو بہت ہی اچھا ثابت ہوا۔ ان کے دفتر کے ساتھیوں کو بھی یہ پنی بہت پسند آئی۔ بس اس دن ہی انہوں نے فیصلہ کر لیاتھا کہ وہ ’پروٹین پنی‘ کو کمرشل پیمانے پر بنا کر ایک نئے کاروبار کی بنیاد رکھیں گی۔

دنیا کی امیر ترین ائیرہوسٹس منظر عام پر آگئی، لیکن پیسہ کیسے کمایا؟ نوکری سے نہیں بلکہ۔۔۔ طریقہ جان کر آپ بھی دنگ رہ جائیں گے
جیس نے اپنی جاب کے ساتھ ہی گھر پر پنیاں بنا کر ایک ریسٹورنٹ کو فروخت کرنا شروع کر دیں۔ یہ تجربہ بھی کامیاب رہا اور سوچنے لگتیں کہ کیوں نہ فل ٹائم کاروبار شروع کریں۔ تب ان کے پاس کاروبار شروع کرنے کے لئے ایک پیسہ بھی نہ تھا۔ ایک چیز جو وہ بیچ کر کاروبار شروع کر سکتی تھیں ان کی ٹیوٹا کرولا گاڑی تھی۔ ناچار انہوں نے گاڑی فروخت کر دی اور ’پروٹین بال‘ یعنی ’پروٹین والی پنیاں‘ کمرشل سطح پر بنانی شروع کر دیں۔انہوں نے ہیلتھ لیب کے نام سے کمپنی قائم کی، جس کے بنائے پروٹین بال آج دنیا بھر میں ساڑھے تین ہزار سے زائد سٹورز پر فروخت ہو رہے ہیں۔ چین، جنوب مشرقی ایشیا اور کینیڈا کی کئی ائرلائینیں بھی ان کے پروٹین بال خریدتی ہیں۔