بینک کا کسٹمر 2 نیم برہنہ نوجوان لڑکیوں کو لے کر بینک کی برانچ پہنچ گیا، کس چیز کے احتجاج میں یہ کام کیا؟ جان کر آپ کی بھی ہنسی نہ رُکے گی

ڈیلی بائیٹس

ماسکو(مانیٹرنگ ڈیسک) بینکوں یا دیگر دفاتر میں بیٹھے’بابو‘ کم ہی کسی کو گھاس ڈالتے ہیں۔ کم و بیش پوری دنیا میں سرکاری ملازمین کی طرف سے سائلین کے ساتھ سردمہری کا سلوک کرنا عام بات ہے۔ گزشتہ دنوں روس کے سرکاری بینک میں ایک شخص کے ساتھ ایسا ہی ناروا سلوک کیا گیا جس کے خلاف احتجاج کے لیے وہ ایسی چیز بینک میں لے آیا کہ جان کر آپ کی ہنسی نہیں رکے گی۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق یہ کسٹمر ماسکو میں’سبربینک‘ (Sberbank)کی ایک برانچ میں گیا جہاں عملے نے اسے انتہائی ناقص سروس فراہم کی۔

فنکاروں کا اچانک اپنی مصروفیات ترک کر نے کا اعلان ، کئی کے فون بھی بند، سوشل میڈیا پر SwitchedOff # ٹیگ کا استعمال
اس قدر بری سروس پر یہ کسٹمر ایک بار تو چلا گیا لیکن جب دوبارہ بینک آیا تو اس کے ساتھ دو حسین و جمیل لڑکیاں تھیں، جنہیں وہ احتجاج کے لیے اپنے ساتھ لایا تھا۔ لڑکیوں نے بینک میں آتے ہی برہنہ ہو کر رقص شروع کر دیا۔ منظرعام پر آنے والی ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ کبھی لڑکیاں ملازمین کی میزوں پر چڑھ جاتیں اور کبھی ان کے گرد رقص کرنے لگتیں۔ اس دوران اس کسٹمر کو بینک عملے سے یہ کہتے ہوئے سنا جا سکتا ہے کہ ”میں آپ کو بتاتا ہوں کہ کسٹمرز سے کس طرح برتاﺅ کیا جاتا ہے۔ آپ لوگوں نے مجھے اتنا پریشان کیا کہ میرا نروس بریک ڈاﺅن ہوتے ہوتے بچا۔ تم کسٹمرز کے ساتھ اس طرح کا سلوک کرتے ہو جو اس وقت تمہارے ساتھ ہو رہا ہے۔امید کرتا ہوں کہ تم لوگوں کو یہ لمحات ہمیشہ یاد رہیں گے۔“بینک کی طرف سے جاری بیان میں بتایا گیا ہے کہ اس کسٹمر کا مسئلہ حل کر دیا گیا تھا، اس کے باوجود اس نے یہ کام کیا۔