وہ ہوٹل جہاں آپ پیسے دے کر مچھلی کے ساتھ رات گزار سکتے ہیں، لیکن کیوں؟ جان کر آپ بھی حیران پریشان رہ جائیں گے

ڈیلی بائیٹس

برسلز(نیوز ڈیسک) اچھے اور بڑے ہوٹلوں میں مہمانوں کے آرام و آسائش کا تو پورا خیال رکھا ہے لیکن شاید اس بات پر زیادہ توجہ نہیں دی جاتی کہ مہمانوں کی کچھ نفسیاتی و جذباتی ضروریات بھی ہوتی ہیں۔ ہر شخص کو کسی کا ساتھ دستیاب نہیں ہوتا اور خصوصاً جب لوگ گھر سے دور کسی ہوٹل میں مقیم ہوتے ہیں تو احساس تنہائی بڑھ جاتا ہے۔ دلچسپ خبر یہ ہے کہ اب کچھ بڑے ہوٹلوں نے اس مسئلے کا بھی اچھا سا حل ڈھونڈ لیا ہے۔ ایسے کسٹمرز کو معمولی کرائے پر ایک خوبصورت مچھلی مل سکے گی جسے وہ رات بھر اپنے ساتھ کمرے میں رکھ سکیں گے۔ اب وہ اس کے ساتھ باتیں کریں یا صرف ا س کی پیاری صورت دیکھ کر دل بہلائیں، یہ ان کی مرضی ہے۔

’میں پاکستانی اوربھارتی شہریوں کو گھر کرائے پر نہیں دوں گا کیونکہ وہ کھانا بناتے ہیں تو۔۔۔‘ ایک ہزار گھروں کے مالک انگریز نے ایسی وجہ بتادی کہ آپ کو بھی ہنسی آجائے گی
ویب سائٹ ’ایٹلس ابسکیورا‘ کے مطابق دنیا کے کئی اچھے ہوٹلوں نے اپنے تنہا کسٹمرز کو مچھلیاں کرائے پر فراہم کرنے کا سلسلہ شروع کردیا ہے۔ یہ سروس فراہم کرنے والے ہوٹلوں میں تازہ ترین اضافہ برسلز کا مشہور وان ڈیر واک ہوٹل ہے جو کہ شارلے رائے ائیرپورٹ کے قریب واقع ہے۔ یہ ہوٹل ایک رات کے لئے 3.5 یورو میں گولڈ فش کرائے پر دیتا ہے۔
اس سروس کا بانی امریکہ کے مشہور کمپٹن ہوٹل گروپ کو سمجھا جاتا ہے جس کے تمام ہوٹلوں میں گولڈ فش کرائے پر فراہم کی جاتی ہیں۔ یہ ہوٹل گزشتہ ایک دہائی سے گولڈ فش کرائے پر فراہم کررہے ہیں، خصوصاً ایسے کسٹمرز کو جن کے ساتھ بچے ہوتے ہیں تاکہ وہ مچھلیوں کی کمپنی سے لطف اندوز ہوسکیں۔ انگلینڈ کا ہیپی گیسٹ ہوٹل لاج صرف ایک قسم کی مچھلی ’ہیپی‘ پانچ پاﺅنڈ فی رات کرائے پر فراہم کرتا ہے، لیکن اسے کرائے پر حاصل کرنے کے لئے پہلے سے بکنگ کروانا پڑتی ہے۔