جہاز کے ٹیک آف سے چند لمحے قبل پائلٹ کو گرفتار کرلیا گیا، یہ کون تھا اور کیا کرنے جارہا تھا؟ ایسا انکشاف کہ جان کر ہر مسافر کے پیروں تلے زمین نکل جائے

ڈیلی بائیٹس

نیویارک (نیوز ڈیسک)ہوائی جہاز اڑانا انتہائی حساس نوعیت کی ذمہ داری ہے، جس کے لئے پائلٹ کو جسمانی و ذہنی طور پر پوری طرح مستعد ہونا چاہئیے، لیکن ایک بدقماش امریکی پائلٹ کی غیر ذمہ داری کا انداز کیجئے کہ ڈھیروں شراب پینے کے بعد جب ہوش حواس کھونے کے قریب تھا تو جہاز اڑانے کے لئے جا پہنچا۔
دی مرر کی رپورٹ کے مطابق شراب پی کر برطانیہ سے امریکہ پرواز لیجانے کی کوشش کرنے والے پائلٹ کے خون میں الکوحل کی شرح قانونی حد سے 7گنا زیادہ پائی گئی۔ کارلوس رابرٹو لیکونا نامی پائلٹ کا تعلق امریکی ریاست ٹیکساس سے ہے اور اسے یونائیٹڈ ائیرلائن کی گلاسگو سے نوآرک جانے والی پرواز میں فرسٹ آفیسر کے طور پر خدمات سرانجام دینا تھیں۔

بھارت میں جہاز کو ایک ایسی وجہ سے فوری طور پر اتارلیا گیا کہ جان کر آپ ہنس ہنس کر لوٹ پوٹ ہوجائیں گے
پیسلی شیرف کورٹ کو بتایا گیا کہ کارلوس رابرٹو کو گزشتہ دال 27 اگست کے دن اس وقت ائیرپورٹ پر روکا گیا جب سکیورٹی اہلکاروں کو اس کے منہ سے آنے والی سخت بدبو کا سامنا کرنا پڑا۔ جب اس کے ٹیسٹ کئے گئے تو پتہ چلا کہ اس نے مقررہ حد سے سات گنا زیادہ الکوحل استعمال کررکھی تھی۔ عدالت نے اسے بدترین غفلت کا مجرم قرار دیتے ہوئے 10ماہ کے لئے جیل بھیج دیا ہے۔ اسے پائلٹ کی نوکری سے پہلے ہی فارغ کیا جاچکا ہے۔
واضح رہے کہ امریکی فیڈرل ایوی ایشن کے مطابق پرواز سے قبل پائلٹ کے خون میں الکوحل کا تناسب 0.04 سے زیادہ نہیں ہونا چاہیے۔ یہ بھی لازم ہے کہ پرواز کے لئے رپورٹ کرنے سے قبل 8 گھنٹوں کے دوران شراب نوشی نہ کی گئی ہو۔