’مجھے بتایا گیا تھا کہ تمہارا ریپ کیا جارہا ہے تاکہ تم مسلمان ہوجاﺅ‘ کس نے یہ کہہ کر نوجوان لڑکی کے ساتھ جنسی زیادتی کر ڈالی؟ جان کر آپ کو بھی غصہ آجائے

ڈیلی بائیٹس

دمشق(مانیٹرنگ ڈیسک) مذہب کے نام پر قتل و غارت کرنے والے دہشت گردوں کی بدکرداری سے ہر کوئی واقف ہے، لیکن شام کے شہر رقہ میں دہشت گرد اغواءکی گئی لڑکیوں کو کیا کہہ کر ہوس کا نشانہ بنا رہے ہیں، یہ جان کر یقینا آپ حیرت زدہ رہ جائیں گے کہ یہ شیطان کے چیلے دین کا مذاق اڑانے میں اس حد تک بھی جا سکتے ہیں۔
میل آن لائن کے مطابق شمالی عراق سے اغواءکی گئی ایک یزیدی لڑکی نے بتایا کہ شدت پسند درجنوں لڑکیوں کو دیوار کے ساتھ قطار میں کھڑا کرتے تھے اور پھر ان کے جسموں کو چھوتے ہوئے گزرتے تھے۔ اگر ان کے جسم پر نسوانی اعضاءمحسوس ہوتے تھے تو انہیں جنسی ہوس کا نشانہ بنانے کے لئے ساتھ لے جاتے تھے، اور اگر ان کے جسم پر نسوانی اعضاءاتنے چھوٹے ہوتے تھے کہ ہاتھ سے محسوس نہ کئے جا سکیں تو انہیں واپس بھیج دیا جاتا اور تین ماہ بعد اسی عمل سے دوبارہ گزارا جاتا تھا۔

وہ علاقہ جہاں صرف 80 ہزار روپے میں نوجوان مسلمان لڑکی خریدی جاسکتی ہے، انتہائی شرمناک تفصیلات سامنے آگئیں
ہینری جیکسن سوسائٹی سے تعلق رکھنے والی محقق نکیتا ملک نے غلامی و جنسی تشدد کے موضوع پر تحریر کئے گئے ایک مقالے میں یہ انکشافات کئے ہیں۔ نکیتا کا کہنا ہے کہ داعش کے شدت پسندوں کے ظلم کا نشانہ بننے والی متعدد خواتین اور لڑکیوں نے اپنے ساتھ پیش آنے والے لرزہ خیز واقعات انہیں بتائے۔
ایک اور لڑکی نے شدت پسندوں کی بے حیائی اور بے راہروی کا ذکر کرتے ہوئے بتایا کہ وہ متعدد لڑکیوں کو ایک ہی کمرے میں اکٹھے کرکے جنسی زیادتی کا نشانہ بناتے تھے۔ وہ ان لڑکیوں سے کہتے تھے کہ انہیں مسلمان کرنے کے لئے ان کی عصمت دری کی جا رہی ہے۔ اس لڑکی نے مزید بتایا کہ ”مجھے بھی یہی کہہ کر جنسی درندگی کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ جب ایک بار میں نے فرار ہونے کی کوشش کی تو انہوں نے مجھے پکڑ لیا اور سزا کے طور پر نصف درجن شدت پسندوں نے مل کر مجھے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا۔“