”میں نے 100 مردوں کے ساتھ۔۔۔“عرب ملک کی عدالت میں نوجوان لڑکی نے ایسی بات کہہ دی کہ شرم کے مارے جج کے بھی گال لال ہو گئے

ڈیلی بائیٹس

دبئی (ڈیلی پاکستان آن لائن) دنیا کے کئی ممالک میں جسم فروشی کا مکروہ دھندہ قانونی قرار دیا جا چکا ہے تاہم یہ ان ممالک میں بھی زورو شور سے چل رہا ہے جہاں اس کی قانونی اجازت تو درکنار پکڑے جانے پر انتہائی سخت سزائیں بھی دی جاتی ہیں۔ ایسی ہی چند خواتین دبئی میں بھی پکڑی گئیں جنہیں سزا تو دیدی گئی ہے لیکن سماعت کے دوران ان خواتین نے کچھ ایسے انکشافات کئے کہ جج بھی دنگ رہ گئے۔

’پچھلے 11 برس سے میں فحش فلمیں دیکھنے کی شرمناک عادت میں مبتلا ہوں اور اب جب خواتین۔۔۔‘ پاکستانی شہری نے اپنی زندگی کی ایسی مشکل بیان کردی جس کا سامنا آج کل بہت سے نوجوانوں کو ہے، لیکن حل کیسے ممکن ہے؟ جانئے 
تفصیلات کے مطابق دبئی کی ایک عدالت نے نائیجیریا کی 3 خواتین کو جسم فروشی کے قبیح دھندے میں ملوث ہونے کا جرم ثابت ہونے پر 1 سال قید کی سزا سنادی ہے اور ان سزا ختم ہوتے ہی انہیں ڈی پورٹ کرنے کا حکم بھی دیا ہے۔ ان خواتین نے سماعت کے دوران ناصرف اپنے جرم کا اعتراف کیا بلکہ یہ بھی بتایا کہ وہ اس دھندے کے دوران کتنے مردوں کے ساتھ رات گزار چکی ہیں۔
غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق ان میں سے ایک خاتون جو مختصر مدت کے ویزے پر دبئی میں آئی تھی، نے اپنے جرم کا اعتراف کرتے ہوئے عدالت کو بتایا کہ اس نے 100 مردوں کیساتھ رات گزاری۔ دوسری خاتون کا کہنا تھا کہ اس نے تقریباً 60 مردوں کیساتھ رات گزاری جبکہ تیسری خاتون نے کہا کہ اسے تعداد سے متعلق کچھ یاد نہیں ہے۔

خاوند کے زنانہ رویے سے تنگ خاتون پولیس کے پاس پہنچ گئی، طلاق کا مطالبہ
ذرائع کے مطابق یہ خواتین شارجہ کے ایک ہوٹل میں رہ کر یہ کام کر رہی تھیں اور اپنے ’گاہکوں‘ سے 2,500 درہم کی رقم لیتی تھیں۔ پولیس نے اطلاعات ملنے کے بعد جال بچھایا اورانہیں گرفتار کر لیا۔