رات کو سوتے ہوئے یہ ایک کام کرنے والے مردوں کے بانجھ پن کا خطرہ بے حد بڑھ جاتا ہے، سائنسدانوں نے خبردار کردیا

تعلیم و صحت

نیویارک (نیوز ڈیسک)جدید دور کے رواج اور فیشن کے مطابق تنگ زیر جامے کا استعمال بہت عام ہو چکا ہے ۔کچھ لوگ تو اس لباس کے اس قدر عادی ہو جاتے ہیں کہ رات کو سوتے وقت بھی اسے پہنے رہتے ہیں، البتہ سائنسدانوں نے اس عادت کو انتہائی نقصان دہ قرار دے دیا ہے۔
اخبار ڈیلی سٹار کی رپورٹ کے مطابق تحقیق کار ڈاکٹربرائن سٹیکسنر کا کہنا ہے کہ زیر جامہ یا تنگ لباس پہن کر سونے کے کئی اور نقصانات بھی ہیں لیکن سب سے بڑا خطرہ بانجھ پن کا ہے۔ جرسی یورالوجی گروپ سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر برائن کا کہنا ہے کہ زیر جامے جیسے تنگ لباس کی وجہ سے سپرم پیدا کرنے والے اعضاءجسم کے ساتھ چمٹے رہتے ہیں اور جسمانی حرارت سپرم کی صحت اور کوالٹی پر نظر انداز ہوتی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ صحت مند سپرم کے لئے درجہ حرارت جسم کے عمومی درجہ حرارت سے قدرے کم رہنا ضروری ہے لیکن تنگ لباس کی وجہ سے سپرم پیدا کرنے والے حصے جسم کے زیادہ قریب رہتے ہیں اور انہیں کم درجہ حرارت دستیاب نہیں ہو پاتا۔ تنگ زیر جامے کی وجہ سے جسم کے زیریں حصوں کی جلد ضرورت سے زیادہ نم رہتی ہے جس کے نتیجے میں جلدی مسائل پیدا ہوسکتے ہیں اور خصوصاً اگر کوئی زخم ہو جائے تو اس کا مندمل ہونا مشکل ہوجاتا ہے۔

ڈاکٹر برائن نے بتایا کہ مردوں کے لئے ان کا مشورہ یہی ہے کہ وہ تنگ زیر جامے سے پرہیز کریں کیونکہ ایسا کرنے سے نہ صرف تولیدی اعضاءکا درجہ حرارت کم رہے گا، جس کی وجہ سے سپرم توانا اور صحت مند رہیں گے، بلکہ بلڈ پریشر بھی قابو میں رہے گا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ معدنیات، وٹامن اور پروٹین سے بھرپورغذائیں کھانا بھی سپرم کی صحت اور طاقت میں اضافہ کرتا ہے۔