’زمین کا درجہ حرارت اتنا گرنے والا ہے کہ ہر طرف برف ہی برف ہوگی‘ سائنسدانوں نے سب سے خطرناک پیشنگوئی کردی، کتنا عرصہ باقی رہ گیا؟ انتہائی پریشان کن خبر آگئی

ماحولیات

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک)سورج کی سطح پر ہونے والی تبدیلیوں کے متعلق ماہرین پہلے سے آگاہ کرتے آ رہے ہیں، لیکن اب ماہرین نے ایک انتہائی خطرناک پیش گوئی کر دی ہے۔ برطانیہ کی نارتھ امبریا یونیورسٹی کے ماہرین کا کہنا ہے کہ دنیا ایک بار پھر برفانی دور کی طرف جا رہی ہے اور وہ وقت زیادہ دور نہیں جب زمین کا درجہ حرارت اس قدر کم ہو جائے گا کہ ہر طرف برف ہی برف ہو گی۔ برطانوی اخبار ڈیلی سٹار کی رپورٹ کے مطابق ماہر ویلٹینا زارکووا کا کہنا تھا کہ ”ہماری تحقیق میں انکشاف ہوا ہے کہ 15سال کے اندر اندر زمین کا درجہ حرارت بہت کم ہو جائے گا۔ یورپ، برطانیہ اور دیگر کچھ خطوں میں یہ منفی 7ڈگری تک گر جائے گا جس سے ایک نئے برفانی دور کا آغاز ہو گا۔ یورپ، شمالی امریکہ اور ایشیاءاس صورتحال سے زیادہ متاثر ہوں گے۔“
رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ جس طرح 1650ءسے 1710ءتک برطانیہ سمیت یورپ کے بیشتر حصوں میں درجہ حرارت انتہائی کم ہو گیا تھا، اب بھی ویسا ہی ہونے جا رہا ہے،جس کے بعد گلیشیئرز میں اضافہ ہو گا اور سمندروں، دریاﺅں اور جھیلوں میں برف جم جائے گی۔ ویلٹینا کا کہنا تھا کہ ”ہم نے ریاضیاتی ماڈلز کا تجزیہ کیا ہے جس سے معلوم ہوا ہے کہ سورج سے حرارت کے اخراج میں کمی واقع ہو رہی ہے۔ ہمارا یہ ماڈل 97فیصد درستگی کے ساتھ شمسی سائیکل کی پیش گوئی کر سکتا ہے اور اس میں غلطی کی گنجائش بہت کم ہے۔اس ماڈل سے معلوم ہوا ہے کہ سورج کی کارکردگی 1645ءسے 1715ءکے دوران والی سطح پر جانے والی ہے۔یہ وہ دور تھا جب درجہ حرارت اتنا کم ہو گیا تھا کہ دریائے ٹیمز اور بالٹک سمندر جم گئے تھے۔“ انہوں نے پیش گوئی کی کہ آئندہ 15سال کے اندر اندر سورج کی کارکردگی میں 60فیصد تک کمی واقع ہو جائے گی جس کا مطلب ہے کہ ہماری زمین ایک نئے برفانی دور میں داخل ہو جائے گی جو ممکنہ طور پر 33سال پر محیط ہو گا۔“