سربیا میں 1300 کے قریب تارکین وطن اب بھی پھنسے ہوئے ہیں

عالمی منظر


سربیا (اے پی پی) سربیا کے وزیر داخلہ نیبوڑسا اسٹیفانووچ کا کہنا ہے کہ اْن کے ملک میں بلقان کی ریاستوں کی جانب سے سرحدیں بند کیے جانے کے بعد1300 کے قریب غیرقانونی تارکینِ وطن ابھی بھی پھنسے ہوئے ہیں۔ اسٹیفانووچ کے مطابق سرحدوں پر اضافی فوج اور پولیس کی گشت کے بعد سے نئے مہاجرین کی آمد پوری طرح روک دی گئی ہے۔ سرب وزیر داخلہ نے یہ بھی کہا کہ اْن کا ملک یورپی یونین اور ترکی کے درمیان طے پانے والی ڈیل کو تسلیم کر لے گا کیونکہ اِس ڈیل سے مہاجرین کے بحران کا حل ممکن ہے۔ بلقان کے ملکوں نے رواں مہینے کی آٹھ تاریخ کو اپنی سرحدیں بند کر دیں تھیں تا کہ مغربی یورپ کا رخ کرنے والے مہاجرین کا راستہ روکا جا سکے۔