گوجرانوالہ میں 16سالہ لڑکی کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا دیا گیا ،مرکزی ملزم گرفتار

گوجرانوالہ

گوجرانوالہ (ڈیلی پاکستان آن لائن )گوجرانوالہ میں 16سالہ لڑکی کو دوستی کی پیشکش مسترد کرنے پر اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا دیا گیاہے ۔
تفصیلات کے مطابق پولیس نے مقدمہ درج کر کے کارروائی کا آغاز کر دیاہے اور مرکزی ملزم قدیر شاہ کو اس کی رہائش گاہ شاہدرہ سے گرفتار کر لیا گیاہے جبکہ دیگر کی تلاش بھی جاری ہے ۔مقدمہ میں لڑکی کے اہل خان کی جانب سے موقف اختیار کیا گیاہے کہ ان کی بیٹی دسویں جماعت کی طالبہ ہے ،وہ گھر پر اکیلی تھی کہ چار افراد گھر میں زبردستی گھس آئے اور انہوں نے ہماری بیٹی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا ۔
لڑکی کی ماں کا کہناہے کہ وہ کام کیلئے صبح ساڑھے چھ بجے گھر سے چلی جاتی ہے اور اس کی بیٹی گھر میں اکیلی ہو تی ہے اور وہ تقریبا دوپہر دو بجے واپس لوٹتی ہے ۔ان کا کہناتھا کہ جب میں گھر پہنچی تو میں نے دیکھا کہ فرید خان کا بیٹا قدیر اور ماجد اپنے دیگر ساتھیوں کے ساتھ گھر سے نکل ر ہا تھا ،میں جلدی جلدی گھر میں داخل ہوئی اور اپنی بیٹی کو تلاش کرنا شروع کر دیا اور وہ مجھے زخمی حالت میں ملی ،اور اس نے مجھے بتایا کہ ان افراد نے میرے ساتھ زیادتی کی ہے ،میں فوری اپنی بیٹی کو سول ہسپتال لے گئی اور اس کا میڈیکل چیک اپ کروایا ۔اس کیس کے حوالے سے یہ بھی افواہیں کہ قدیر اپنے دوستوں کی اس لڑکی کے ساتھ دوستی کروانا چاہتا تھا لیکن لڑکی کے انکار پر اسے زیادتی کا نشانہ بنا یا گیا ۔