سربیا میں پھنسے پاکستانیوں سمیت درجنوں نوجوانوں کو سکول میں داخل کرلیاگیا

بین الاقوامی

بلغراد(این این آئی)بلقان ریاستوں کی جانب سے اپنی اپنی قومی سرحدوں کی بندش کے بعد سربیا میں موجود سینکڑوں مہاجرین اب رک جانے والے تعلیمی سلسلے کی جانب دوبارہ لوٹ رہے ہیں جبکہ اس سلسلے میں پاکستانیوں سمیت درجنوں نواجوانوں کو سکول میں داخل کر لیاگیا ہے۔

روہنگیا مہاجرین قومی سلامتی کے لئے خطرہ ہیں، آہنی ہاتھوں سے نمٹنا ہوگا: بھارتی وزیرداخلہ راج ناتھ
غیر ملکی میڈیارپورٹس کے مطابق بلقان روٹ کہلانے والے راستے کی بندش کے بعد قریب 4 ہزار تارکین وطن، جن میں اکثریت افغان اور پاکستانی باشندوں کی ہے سربیا میں پھنس کر رہ گئے تھے۔ یہ وہ افراد تھے جو ترکی کے ذریعے بحیرہء ایجیئن عبور کر کے یونان پہنچے تھے اور پھر بلقان خطے کے ذریعے مغربی اور شمالی یورپ جانا چاہتے تھے۔ تاہم بلقان کی ریاستوں نے اپنی اپنی سرحدیں غیرقانونی تارکین وطن کے لیے بند کر دیں اور وہ بلقان خطے کی مختلف ریاستوں میں پھنس کر رہ گئے۔سربیا میں موجود ان4 ہزار تارکین وطن میں سے نصف تعداد بچوں کی ہے، جن کی تعلیم کے ٹوٹے ہوئے سلسلے کو دوبارہ جوڑنے کے لیے عالمی ادارہ برائے اطفال یونیسیف کی مدد سے انہیں سکول بھیجا جا رہا ہے جبکہ ان بچوں کو اب مقامی زبان سے ناآشنائی کے باوجود مختلف سکولوں میں داخل کیا جا رہا ہے۔