روس میں بم کے اطلاعات کے بعد عوامی مقامات سے 20ہزار افراد کا انخلا

بین الاقوامی

ماسکو(ڈیلی پاکستان آن لائن) روسی دارلحکومت ماسکو میں عوامی مقامات پر بم کی اطلاعات کے بعد سیکورٹی فورسز نے20ہزار افراد کو نکال لیا، تاحال کسی بھی عوامی مقام سے بم ملنے کی تصدیق نہیں کی گئی۔

بوڑھے والدین کو کندھوں پر اٹھائے7دن بعد روہنگیا نوجوان بنگلہ دیش پہنچ گیا
روسی میڈیا کے مطابق سیکورٹی فورسز نے30شابنگ سینٹرز، ریلوے سٹیشنز اور یونیورسٹیز سے 20ہزار افراد کو بم کی اطلاعات کے بعد باہر نکال دیا ہے۔ پولیس کے مطابق انہیں عوامی مقامات پر بیک وقت بم دھماکوں کی اطلاعات تھیں تاہم کسی بھی جگہ سے تاحال کوئی بم برآمد نہیں ہوا۔ حکام کے مطابق یہ ٹیلفونک دہشت گردی ہے لیکن ہم ایسی خبروں کے حوالے سے تحقیق کر رہے ہیں ۔
ایمرجنسی سروسز کے مطابق عوامی مقامات پر بم کی موجودگی کی خبروں کے بعد پولیس حکام ، بم ڈسپوزل ماہرین اور کھوجی کتوں کی مدد سے ان مقامات کی تلاشی لی جارہی ہے۔
بم کی موجودگی کی اطلاعات ماسکو کے تین بڑے ریلوے سٹیشنز، ایک درجن سے زائد شابنگ مالز، ماسکو سٹیٹ یونیورسٹی سمیت تین بڑی یونیورسٹیز اور ماسکو سٹیٹ انسیٹیوٹ آف انٹرنیشنل ریلیشن کے بارے میں تھیں ۔


تاس نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق بم کی اطلاعات کے بعدریلوے سٹیشنز پر ٹرینوں کا شیڈول متاثر ہوا ہے جب کہ تما م ریل گاڑیوں کو شہر سے باہر روک دیا گیا ہے، سوشل میڈیا پر شئیر کی جانے والی تصاویر میں مختلف جگہوں پر لوگوں کا ہجوم دیکھا جا سکتا ہے۔


واضح رہے کہ بم حملوں کی ایک اطلاع گذشتہ ہفتے بھی دی گئی تھی جس کے دوران روس کے22شہروں سے45ہزار سے زائد لوگوں کو نکالا گیا تھا اور ایسی ٹیلی فون کالز یوکرائن سے موصول ہوئی تھیں ۔


دہشت گردی کی بے بنیاد اور غلط خبریں دینے پر روسی قانو ن کے تحت پانچ سال تک قید ہو سکتی ہے، تازہ ترین ٹیلی فون کالز کے حوالے سے بھی حکام نے تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔

\