پاکستان کیساتھ کچھ مسائل حل طلب ہیں: افغانستان، سرحد کی بندش پر ڈبلیو ٹی او سے شکایت کر دی

بین الاقوامی

کابل ( آئی این پی ) افغان صدر کے قومی سلامتی کے مشیر محمد حنیف اتمر نے کہا ہے پاکستان اور افغانستان کے درمیان لندن میں مذاکرات نتیجہ خیز اور تعمیری رہے تاہم اب بھی کچھ مسائل حل طلب ہیں جس کی بڑی وجہ دونوں ملکوں کے درمیان اعتماد کی کمی ہے۔

روسی خبر رساں ادارے سپتنک سے گفتگو کرتے ہوئے افغان قومی سلامتی کے مشیر محمد حنیف اتمر کا کہنا تھا افغانستان اور پاکستان نے مطلوب دہشت گردوں کی فہرستوں کا تبادلہ کیا ہے اور مزید تعاون بڑھانے پر اتفاق کیا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا پاکستان اور افغانستان کے درمیان لندن میں ہونے والے مذاکرات میں کشیدگی کو کم کرنے اور پاک افغان بارڈر پر کراسنگ پوائنٹس کھولنے سمیت دیگر امور زیر غور آئے۔ واضح رہے چند روز قبل لندن میں پاکستان اور افغانستان کے درمیان حالیہ کشیدگی کے خاتمے کیلئے مذاکرات ہوئے تھے جس میں مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے بھی شرکت کی۔

مقبوضہ کشمیر کی کٹھ پتلی حکومت نے آزادی پسند قیادت کو نظربند کرکے اپنی شکست تسلیم کرلی ،بھارت نواز جماعتیں مظلوم کشمیری عوام پر ڈھائے جانے والے مظالم میں برابر کی شریک :سید علی گیلانی

دوسری طرف افغان صنعت و تجارت کے نائب وزیر قربان حقجو نے کہا ہے کہ سرحد کی بندش کے حوالے سے پاکستان کیخلاف شکایت پر بڑی تعداد میں ڈبلیو ٹی او کے رکن ممالک افغانستان کی حمایت میںسامنے آئے ہیں ۔ سرحد بند کرنے کے حوالے سے افغانستان کی پاکستان کیخلاف عالمی تجارتی تنظیم (ڈبلیو ٹی او ) سے شکایت پر کمیشن 6 اپریل کو تعین کریگا۔