پنجاب بینک کیس ، نوکری خطرے میں پڑ گئی ہے ،گواہ نے احتساب عدالت میں ہاتھ جوڑ دیئے

لاہور

لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت میں بینک آف پنجاب کیس میں مسلسل اڑھائی ماہ سے پیش ہونے والے نیب کے گواہ کمال سجاد نے دوران سماع فاضل جج کے سامنے ہاتھ جوڑ دیئے ،اس کیس میں گواہ بن کر اس کی اپنی نوکری خطر ے میں پڑ گئی ہے ،گواہ نے عدالت سے استدعا کی کہ خدا کے واسطے اس پر جرح مکمل کرادی جائے۔

احتساب عدالت میں نیب نے بینک آف پنجاب کا کیس پیش کررکھا ہے جس میں بینک آف پنجاب کے سابق چیئرمین ہمیش خان کے علاوہ حارث سٹیل مل کے مالک شیخ افضل سمی 10ملزمان شامل ہیں ،عدالت میں یہ چالان 2008ءسے زیرسماعت ہے ابھی تک گواہوں کے بیانات قلمبند ہورہے ہیں۔ عدالت میں گزشتہ روزایک گواہ سجادکمال اڑھائی ماہ سے پیش ہو رہا ہے جس پر شیخ افضل کے وکیل کی جرح جاری ہے، عدالت میں دوران سماعت گواہ کمال سجاد نے فاضل جج کو درخواست دی کہ خدا کے واسطے اس کو اس کیس سے فارغ کردیا جائے ،اڑھائی ماہ سے وکلا ءاس پر جرح کررہے ہیں لیکن جرح ہے کہ ختم ہونے کا نام نہیں لے رہی ہے ،اس کیس میں گواہ بن کر اس کی اپنی نوکری خطر ے میں پڑ گئی ہے،اب تو بینک بھی چھٹی نہیں دے رہا ہے ،گواہ نے مزیدکہا کہ مسلسل جرح کا جواب دے دے کر وہ خود کیس بھولنا شروع ہوگیا ہے۔عدالت نے درخواست پر عدالت میں موجود وکلا ءکو بحث کرنے کو کہا جس پر وکیل صفائی نے اپنی بحث کی عدالت نے درخواست پر فیصلہ کل تک محفوظ کرلیاہے۔