اسلام آباد ہائی کورٹ کا جج بن کر والدہ کا علاج کروانے والے جعل ساز کی درخواست ضمانت خارج

لاہور

لاہور(نامہ نگار)ماڈل ٹاﺅن کچہری کے جوڈیشل مجسٹریٹ راشد علی خان نے اسلام آباد ہائی کورٹ کا جج بن کر سروس ہسپتال میں والدہ کا علاج کروانے والے ملزم جعلی جج سید فیض علی کی درخواست ضمانت مسترد کر دی ہے۔

جوڈیشل مجسٹریٹ راشد علی خان کے روبرو شادمان پولیس نے ملزم جعلی جسٹس سید فیض علی کے خلاف درج مقدمے کا چالان پیش کیا، پراسیکیوشن کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ملزم سروس ہسپتال میں اسلام آباد ہائی کورٹ کا جج بن کر والدہ کے علاج کے لئے وی آئی پی پروٹوکول لے رہا تھا،ملزم نے سروس ہسپتال انتظامیہ کو اسلام ہائی کورٹ کے رجسٹرار کا جعلی لیٹر بھی دیا تھا،سروس ہسپتال انتظامیہ کی جانب سے جعلی جسٹس کو وی آئی پی پروکول فراہم کیا گیا تھا،سروس ہسپتال انتظامیہ کی جانب سے جعلی جسٹس کی والدہ نسیم کوثر کو وی وی آئی پی کمرہ بھی الاٹ کیا گیا تھا،ہسپتال انتظامیہ کی جانب سے شک پڑنے پر لاہور ہائیکورٹ سے رجوع کیا گیا تھا،عدالت عدالیہ نے تصدیق کے بعد رجسٹرار اسلام آباد ہائیکورٹ کے لیٹر کو جعلی قرار دیا تھا،سروس ہسپتال انتظامیہ کی جانب سے جعلی جسٹس کے خلاف مقدمہ درج کروایا تھا ،ملزم سے تفتیش جاری ہے لہذااس کی درخواست ضمانت مسترد کی جائے جس پر فاضل جج نے وکلاءکے دلائل سننے کے بعد ملزم جعلی جج سید فیض علی کی درخواست ضمانت مسترد کر دی ہے۔