”وحدت برائے امن کانفرنس“ کا انعقاد, اپنے مسلک کو چھوڑیں ،نہ کسی دوسرے کے مسلک کو چھیڑیں: میاں مجتبیٰ شجاع الرحمان

لاہور

لاہور (سٹاف رپورٹر) ور لڈ کو نسل آف ریلیجنز پا کستا ن کے زیراہتمام بین المسالک ”وحدت برائے امن کانفرنس“ کا انعقاد کیا گیا، جس سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن میاں مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا کہ ہمیں چاہیے کہ ہم اپنے مسلک کو چھوڑیں نہ اور کسی دوسرے کے مسلک کو چھیڑیں نہ تو اسی سے ہی تمام مسائل حل ہوسکتے ہیں اور میں گارنٹی دیتا ہوں کہ مذہبی مسائل فوراً حل ہوجائیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں اصل وجہ دہشتگردی ہے نہ کہ مذہبی فرقہ واریت ۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ ملک میں مذہبی انتہا پسندی کی اصل وجہ سوشل میڈیا ہے جو موثر قانون نہ ہونے کی وجہ سے حکومت اور پرامن شہریوں کیلے دردسر بنا ہوا ہے۔ انہوں نے کہا مذہب کی وجہ سے تشدد نہیں ہوتاہم امن کے نعرے چھوڑ کر اپنے ایمان پر یقین کرلیں تو سب ٹھیک ہوجائے گا۔ 

صوبائی وزیر تعلیم رانا مشہود نے کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مسلک کی بجائے اسلام کی بات کی جائے تو مسائل پیدا نہیں ہوتے۔ تمام مسالک کو جوڑنا حکومت کا فرض ہے جس کیلئے ہم دن رات کوشاں ہیں۔ ایک مخصوص پارٹی نے سوشل میڈیا پر جو طوفان بدتمیزی شروع کی ہوئی ہے اس کے نتائج ہمارے سامنے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ محرم الحرام کے دوران امن عامہ کو یقینی بنانا حکومت کے ساتھ ساتھ علماءکرام کا بھی فرض ہے۔ انہوں نے کہا اس کیلئے صوبائی حکومت چند دنوں تک صوبائی سطح کی ایک کانفرنس منعقد کررہی ہے جس میں صوبہ بھر کے علماءو مشائخ شرکت کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مسجد کا ممبر اصلاح کا حامی ہوتا ہے ۔ ہمارے علماءکو چاہیے کہ وہ اس کا استعمال پرامن پاکستان کیلئے کریں۔
ملک احمد خان ترجما ن حکومت پنجاب نے کانفرنس کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی پہلی ترجیح ملک میں امن قائم کرنا ہے تا کہ پاکستان میں بسنے والے تمام طبقات اپنے آپ کو محفوظ تصور کریں اور اس کے ساتھ خاص طور پر محرم کے دنوں میں امن و امان قائم رکھنا ہم سب کی مشترکہ ذمہ داری ہے۔ اُنھوں نے مزید کہا کہ علماءکرام مسلکی اختلافات بھُلا کر پاکستان کی خاطر ایک ہو جائیں اور پاکستان کو پُرامن بنانے کے لیے حکومت کا ساتھ دیں۔
حافظ محمد نعمان حامد،ایگزیکٹو ڈائریکٹر ورلڈ کونسل آف ریلیجنز پاکستان نے اپنے خطاب میں کہا کہ محرم الحرا م کا مہینہ تمام مسلمانوں کے لیے، چاہے وہ کسی بھی مکتبہ فکر سے ہوں، بہت اہمیت کا حامل ہے، جس کی وجہ سے اس کا تقدس و احترا م ہم سب کی ذمہ دا ری ہے۔ ا ور ہم ا س ذمہ دا ری کو نبھاکر ہی اس مقد س مہینہ میں ا من و اما ن کی فضا قائم رکھ سکتے ہیں۔


کانفرنس سے مولانا عبدالرﺅف فاروقی، مولانا محمد یٰسین ظفر، سلمان غنی، سجاد میر، علامہ سید قاضی نیاز حسین نقوی،نائب صدر وفاق المدا رس الشیعہ پاکستان، علامہ سید ضیاءاللہ شاہ بخاری (صدر متحدہ جمعیت اِہلِ حدیث پاکستان)، علامہ شفاعت رسول نوری، علامہ شبیر انجم، مولانا جمیل الرحمن اختر، مولانا عزیزالرحمن ثانی، پیر ولی اللہ شاہ بخاری،صدر علماءو مشائخ ونگ مسلم لیگ ن، مولانا جمیل الرحمن اختر (پاکستان شریعت کونسل)، مولانا محمد ندیم سرور معاویہ چیئرمین متحدہ امن فورم، مولانا عاصم مخدوم (مرکزی رہنما کل مسالک علماءبورڈ)، علامہ حسن ہمدانی نائب صد ر مجلس وحدت المسلمین پنجاب،مولانا ا سلم ند یم نقشبندی، مولانا مسعود قا سم قاسمی،مہتمم جامعہ قا سم العلوم، پروفیسر عبدالوحید (بورے والا)، مولانا انعا م الر حمٰن فاروقی، مفتی ریاض جمیل، شیخ الحدیث مولانا عبدالرزاق (فیصل آباد)، مولانا محمد طارق ندیم (عارف والا)، ڈاکٹر شاہدہ پروین، حافظ شعیب الرحمن قاسمی نے خطاب کیا۔
کانفرنس میں تمام مسلم مسالک دیوبندی، بریلوی، اہلِ حدیث اور اہل تشیع علماءا ور زعماءکے علاوہ دیگر طبقہ ہائے فکر کے رہنماو ¿ں نے بھی کثیر تعداد میں شرکت کی۔