صوبائی دارالحکومت کی آبادی میں اضافے کے ساتھ سول اور فیملی مقدمات کی تعداد بڑھنے لگی ہے

لاہور

لاہور(نامہ نگار)صوبائی دارالحکومت کی آبادی میں اضافے کے ساتھ سول اور فیملی مقدمات کی تعداد بڑھنے لگی ہے۔7ماہ کے دوران ساڑھے34ہزار سے زائدمقدمات دائرہوئے جبکہ 1400بچے ماں باپ کی شفقت سے محروم ہوگئے ہیں۔

جسٹس شاہد کریم وزیراعلیٰ پنجاب کی نااہلی کے لئے دائر عمران خان کی درخواست کی سماعت کریں گے

لاہورکی آبادی میں دن بدن اضافے کے ساتھ ہی سول اور فیملی کیسزمیں بھی تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے ،7ماہ کے دوران سول کورٹ میں 31ہزار190کیس دائر ہوئے، اسی طرح فیملی مقدمات 1018 جبکہ گارڈین کورٹ میں 2893کیس دائر ہوئے ہیں۔ مقدمات کی وجہ سے لوگ چڑچڑے پن کاشکارہورہے ہیں،صبح سے ہی لوگ اپنے بچوں کیساتھ عدالتوں میں پیش ہوناشروع ہوجاتے ہیں۔واضح رہے کہ مقدمات کی تعدادبڑھنے سے سول ججزکی تعدادبھی بڑھائی گئی ہے ۔سول مقدمات کے لئے 106،فیملی کورٹس کے لئے 19،رینٹ کے لئے 6 ،گارڈین مقدمات کے لئے 7اورنادراسے متعلق مقدمات کی سماعت کے لئے 7ججزمقررکئے گئے ہیں۔وکلاءکا کہنا ہے کہ مقدمات کی تعدادمیں اضافہ معاشرے کے لئے المیہ ہے۔مقدمات کی تعدادکی مناسبت سے ججزکی یہ تعدادکم ہے جس میں مزیداضافے کی ضرورت ہے۔