علامہ طاہر اشرفی کی گرفتاری کی خبریں پھر جھوٹ نکلیں ،سعودی عرب میں ہوں ، شکست خوردہ ،سازشی اور بیمار زہینت میرے خلاف بے بنیاد اور جھوٹا پراپیگنڈا کرنے میں مصروف ہے :چیئرمین پاکستان علما کونسل

لاہور

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان علما کونسل کے چیئرمین علامہ حافظ  طاہر محمود اشرفی کی قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ہاتھوں  گرفتاری کی خبر پھر جھوٹی نکلی ،حافظ طاہر اشرفی عمرہ کی ادائیگی کے لئے سعودی عرب میں موجود اور عالمی فکری اتحاد کے قیام کے لئے عالم اسلام کی  کئی بین الاقوامی شخصیات اور عرب شیوخ سے ملاقاتوں میں مصروف ہیں ،دوسری طرف حافظ طاہر اشرفی نے اپنی گرفتاری کی خبروں کو شکست خوردہ ،سازشی اور بیمار زہینت کو قرار دیتے   ہوئے کہا ہے کہ میں جب بھی سعودی عرب یا کسی بھی غیر ملکی دورے پر جاتا ہوں میری عدم موجودگی میں میری گرفتاری کی جھوٹی اور بے بنیاد خبریں میڈیا میں چلنا شروع ہو جاتی ہیں ۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان علما کونسل کے چیئرمین علامہ طاہر محمود اشرفی جو گذشتہ ہفتے عمرے کی ادائیگی اور عالمی اسلامی فکری اتحاد کی تشکیل کے لئے سعودی عرب میں گئے تھے ،آج لاہور کے مقامی نجی چینل نے خبر چلائی کہ قانون نافذ کرنے والے ادارے نے طاہر محمود اشرفی کو ان کے ساتھیوں سمیت حراست میں لے کر نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا ہے ،اس خبر کے نشر ہونے کی دیر تھی کہ سوشل میڈیا پر طاہر اشرفی کی گرفتاری کے حوالے سے ایک مہم شروع  ہو گئی ۔ان خبروں کے بعد جب روزنامہ ’’پاکستان ‘‘ نے سعودی عرب میں موجود علامہ طاہر محمود اشرفی سے رابطہ کیا اور میڈیا پر چلنے والی خبروں کے حوالے سے استفسار کیا تو حافظ طاہر اشرفی نے مسکراتے ہوئے کہا کہ میں جب بھی سعودی عرب یا کسی بھی غیر ملکی دورے پر جاتا ہوں تو پیچھے سے مخالف قوتیں سرگرم ہو جاتی ہیں اور میری گرفتاری اور کردار کشی پر مبنی خبریں میڈیا پر چلائی جاتی ہیں ،میں اللہ کے گھر میں موجود ہوں اور دعا گو ہوں کہ میری مخالفت کرنے والے بیمار اور شکست خوردہ ذہنوں کو اللہ ہدایت دے ، مخالفین اور حاسدین میرے خلاف سازشیں کرنے کی بجائے اپنا قبلہ درست کریں تو ہی انہیں کامیابی مل سکتی ہے ۔انہوں نے کہا کہ سعودی عرب میں عمرے کی ادائیگی کے بعد  عالم اسلام کی اہم شخصیات سے انکی بڑی مفصل اور خوش آئند ملاقاتیں جاری ہیں جبکہ اسلامی سربراہی کانفرنس کے موقع پر سعودی عرب میں موجودگی ،عالمی اسلامی رہنماؤں سے ملاقاتیں اور فکری محاذ کے حوالے سے پیش رفت پاکستان اور پاکستانی قوم کے لئے بڑی مبارک ہے جلد ہی قوم کو اس حوالے سے خوشخبری ملے گی ۔علامہ طاہر محمود اشرفی کا کہنا تھا کہ کلبھوشن یادو کی پھانسی رکوانے میں جس طرح ہندوستانی حکومت نے دن رات ایک کیا اگر اسی طرح پاکستانی حکومت بھی متحرک ہوتی تو عالمی عدالت کا نتیجہ ایسا نہیں ہونا تھا ،ہمیں ملکی و قومی مفاد کے بارے میں سیاست سے بالاتر ہو کر سوچنا ہو گا پھر ہی ہم اپنے وطن کی کھوئی ہوئی عزت بحال کرنے میں کامیاب ہو سکتے ہیں ۔واضح رہے کہ اس سے قبل بھی گذشتہ سال حافظ طاہر اشرفیکے حوالے سے    تمام ٹی وی چینلز پر خبریں نشر ہوئیں تھیں کہ اسلام آباد پولیس نے انہیں گرفتار کر لیا ہے ، لیکن بعد میں یہ خبر بھی جھوٹی نکلی تھی کیونکہ اس وقت بھی حافظ طاہر محمود اشرفی عمرے کی ادائیگی کے لئے سعودی عرب گئے ہوئے تھے۔