آج تک ہیلتھ کیئر کمشن کا سربراہ مقرر نہیں کیا گیا ،قائم مقام سی ای او سے کام چلایا جارہا ہے ،ہائی کورٹ نے رپورٹ مانگ لی

لاہور

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے پنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن کے قائم مقام چیف ایگزیکٹیو آفیسر ڈاکٹر اجمل کی تعیناتی کے خلاف درخواست پر پنجاب حکومت، ہیلتھ کیئر کمیشن اور ڈاکٹر اجمل سے 3 ہفتوں میں جواب طلب کر لیاہے۔

چیئرمین واپڈا اور 3ممبران کی تعیناتیاں بظاہر غیر قانونی ہیں ،حکومت نے نہ ہٹایا تو عدالت فیصلہ کرے گی ،ہائی کورٹ 

چیف جسٹس سید منصور علی شاہ عامر علی نے درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کی طرف سے بیرسٹر احمد قیوم نے موقف اختیار کیا کہ پنجاب حکومت نے آج تک ہیلتھ کیئر کمیشن کا چیف ایگزیکٹیو آفیسر تعینات نہیں کیا اور ایک منظور نظر شخص ڈاکٹر اجمل کو چیف آپریٹنگ آفیسر تعینات کر کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر کے اختیارات دیدیئے گئے، انہوں نے مزید موقف اختیار کیا کہ ڈاکٹر اجمل قانون کے مطابق چیف ایگزیکٹیو آفیسر لگنے کے اہل نہیں تھے کیونکہ ہیلتھ کیئر کمیشن ایکٹ کے مطابق سرکاری ملازم یا افسر ہیلتھ کیئر کمیشن کا چیف ایگزیکٹیو افسر تعینات ہی نہیں ہوسکتا لیکن حکومت نے ڈاکٹر اجمل کو نوازنے کیلئے پہلے انہیں چیف آپریٹنگ افسر تعینات کیا اور پھر چیف ایگزیکٹیو آفیسر کی اختیارات دے دیئے ،ڈاکٹر اجمل کی بطور قائم مقام چیف ایگزیکٹیو آفیسر تعیناتی کالعدم کی جائے، عدالت نے پنجاب حکومت، ہیلتھ کیئر کمیشن اور ڈاکٹر اجمل سے 3 ہفتوں میں جواب طلب کر لیاہے۔