برطانیہ نے ترکی کو ساڑھے چار ہزار سال پراناجگ واپس کر دیا


لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) ایک برطانوی خاتون نے 1960ء میں ترکی سے ایک ظروف خریدا اور اپنے ساتھ برطانیہ لے گئی۔ اب اس برتن کے حوالے سے اس پر ایسی بات منکشف ہوئی ہے کہ اس نے یہ برتن واپس ترکی کے حوالے کر دیا ہے۔ ڈیلی صباح کی رپورٹ کے مطابق یہ برتن تانبے کا ایک جگ ہے جس کے متعلق اب معلوم ہوا ہے کہ یہ 4500سال قدیم ہے اور اس کا تعلق کانسی کے دورکے ابتدائی زمانے سے ہے۔ تھیلما بشپ نامی اس خاتون یہ انکشاف ہونے پر جگ لندن میں واقع ترک سفارت خانے کے حوالے کر دیا ہے۔رپورٹ کے مطابق اس جگ کی اونچائی ساڑھے 26سینٹی میٹر ہے۔ تھیلما بشپ کا کہنا ہے کہ ’’میں نے یہ جگ 1960ء میں ترکی کے شہر افسس سے خریدا تھا۔ اب مجھے معلوم ہوا ہے کہ یہ ثقافتی ورثہ ہے چنانچہ میں اسے ترک حکومت کے حوالے کر رہی ہوں۔‘‘ ترک سفارتخانے کی طرف سے تھیلما کو یہ جگ واپس کرنے پر ایک میوزیم کارڈ دیا ہے جس کے ذریعے وہ ترکی بھر کے عجائب گھروں کی مفت سیر کر سکے گی۔ سفارتخانے کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’ثقافتی ورثے کی سمگلنگ کے خلاف دنیا بھر میں جدوجہد کی جا رہی ہے۔ تھیلما نے اپنے اس عمل سے آثارقدیمہ کی سمگلنگ کے خلاف بہترین مثال قائم کی ہے۔‘‘