وائی فائی سے بھی 100 گنا تیز ٹیکنالوجی آگئی


ایمسٹرڈیم(مانیٹرنگ ڈیسک) جدید ٹیکنالوجی کے بخار نے انٹرنیٹ اور وائی فائی کو انسان کی کمزوری بنا دیا ہے اور ممکن ہے کہ آج کے انسان کا شاید سب سے بڑا مسئلہ وائی فائی کی کم رفتار ہی قرار پائے۔ اب سائنسدانوں نے یہ مسئلہ حل کر لیا ہے۔ انہوں نے وائی فائی سے 100گنا زیادہ تیز ایک سسٹم تیار کر لیا ہے جس کا نام لائی فائی ہے۔ دی میٹرو کی رپورٹ کے مطابق لائی فائی کی رفتار حیران کن طور پر 40گیگا فی سیکنڈ ہے اور یہ سروس آئندہ پانچ سال تک صارفین کی دسترس میں ہو گی۔نیدرلینڈ کی اینڈوین یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی کے تحقیق کاروں کا کہنا ہے کہ لائی فائی میں انفراریڈ لائٹ کی شعاعوں، روشنی کی شعاعوں کے ذریعے انٹرنیٹ کی ترسیل کی جاتی ہے اور اس کے کامیاب تجربات کر لیے گئے ہیں۔اس ٹیکنالوجی میں آپٹیکل فائبر سے روشنی کی شعاعیں برآمد گی جو انٹرنیٹ کو آگے پہنچائیں گے۔ اس سسٹم کے چلنے کے لیے توانائی کی ضرورت بھی نہیں ہو گی۔واضح رہے کہ موجودہ وائی فائی سسٹم ریڈیو سگنلز پر انحصار کرتا ہے اور اس کی فریکوئنسی اڑھائی سے 5گیگاہرٹز تک ہوتی ہے لیکن روشنی کی شعاعوں کی فریکوئنسی 200گیگا ہرٹز سے بھی زیادہ ہے جو لائی فائی میں استعمال ہو گی۔