پاکستان پیپلزپارٹی کاوفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈارسے استعفے کا مطالبہ

قومی

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان پیپلزپارٹی نے ملک میں معاشی ایمرجنسی نافذکرنے کے ساتھ ، وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار سے استعفی کا مطالبہ کر دیا،ان کا موقف ہے کہ اسحاق ڈار پر فرد جرم عائد ہونا اس بات کاثبوت ہے کہ ان کے خلاف اداروں کے پاس واضح ثبوت ہیں۔

پاک فوج کی جانب سے بازیاب کروائے جانے والے امریکی جوڑے کی آخری مرتبہ اپنے والدین سے بات 8اکتوبر 2012کو ہوئی
اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے پاکستا ن پیپلزپارٹی کے رہنماﺅں نے مشترکہ پریس کی ،جس میں سینٹر سلیم مانڈی والا کا کہنا تھا کہ اسحاق ڈار کا عہدے پر بیٹھنے کا مقصد ملکی معیشت کو بچانا نہیں بلکہ ان کامقصد اپنی ذات اور نواز شریف کو بچانا ہے۔اسحاق ڈار وزیرخزانہ رہنے کی پوزیشن میں نہیں رہے۔قطر ایل این جی معاہدے کے حوالے سے سلیم مانڈی والاکا کہنا تھا کہ ایل این جی معاہدےمیں بڑے پیمانے پر خلاف ورزیاں کی گئی ہیں،حکومت نے ر ولزکے برعکس نجی کمپنی سے15سال کیلیے معاہدہ کیسے طے کیا؟۔اس موقع پرفرحت اللہ بابرکا کہنا تھا کہ ملک معاشی طورپرمفلوج ہونے جا رہاہے یہ خطرناک بات ہے،وزیرخزانہ پرفرد جرم عائد ہوچکی پھر بھی وہ اپنے عہدے پر براجمان ہیں،اسحاق ڈارکےخلاف گواہوں کاتعلق وزارت خزانہ سے ہے،جس سے صاف ظاہر ہورہا ہے کہ وہ گواہان پر اثر انداز ہورہے ہیں۔سینئر رہنما نئیر بخاری کااس موقع پر کہنا تھا کہ شفاف ٹرائل کے لیے ضروری ہے کہ وزیرخزانہ اسحاق ڈار فی الفور مستعفی ہوں،ان کے خلاف ٹھوس ثبوت ہیں جن کی بنیاد پر ان پر فرد جرم عائد کی گئی ہے ،اگر ثبوت نہ ہوتے تو اسحاق ڈار پر فرد جرم عائد نہیں کی جاتی۔ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم چاہتے ہیں کہ الیکشن مقررہ وقت پرہوں، حکومت کو اپنی مدت پوری کرنی چاہیے۔