پاکستان دیگر ممالک کی نسبت قطر سے سستی گیس خرید رہا ہے: سید اختر علی

قومی

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان انرجی کمیشن کے سابق ممبر سید اختر علی نے کہا ہے کہ قطر کے ساتھ ایل این جی معاہدہ سیاسی صورت حال اختیار کر گیا ہے ، حالانکہ پاکستان بھارت اور بنگلہ دیش کی نسبت سستی گیس خرید رہا ہے اور جو لوگ اس کی مخالفت کر رہے ہیں وہ محض غلط فہمی کا شکار ہیں۔

پاک فوج کی جانب سے بازیاب کروائے جانے والے امریکی جوڑے کی آخری مرتبہ اپنے والدین سے بات 8اکتوبر 2012کو ہوئی
نجی ٹی وی چینل کے پروگرام ”نقطہ نظر “ سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے پاکستان انرجی کمیشن کے سابق ممبر سید اختر علی کا کہنا تھا کہ میں اس وقت ریٹائرڈ ہو چکا ہوں مگر میں پاکستان اور قطر کے درمیان ہونے والے معاہدے کے تکنیکی پہلو جانتا ہوں ۔ اس معاہدے میں مختلف قیمتوں کا موازنہ کیا جا رہا ہے ، جو نہیں کیا جانا چاہیے کیوں کہ معاہدوں میں دو قسم کے قیمتیں ہوتی ہیں، ایک سپاٹ پرائسز ہوتی ہیں جبکہ دوسری طویل المدتی معاہدوں کی قیمتیں ہوتی ہیں، سپاٹ پرائسز وقت کے ساتھ بدلتی رہتی ہیں، موسم کے ساتھ اور ہر روز بدلتی رہتی ہیں، اس لئے ایسے معاہدے عموما سستے شمار کئے جاتے ہیں مگراس معاہدے کے تحت گیس کی فراہمی کی پابندی بھی نہیں ہوتی جبکہ طویل المدتی معاہدوں میں سپلائرگیس فراہمی کا پابند ہوتا ہے اور اس کی قیمتیں عموما مہنگی ہوتی ہیں۔ اسی لئے اس وقت غلط فہمی یہی ہے کہ معاہدہ زیادہ قیمت پر کیا گیا ہے۔ گیس فراہمی کے معاہدے پر ریجن میں مختلف ہوتے ہیں، مشرقی ایشیاءمیں یہ معاہدے مختلف ہیں اور یورپ و امریکہ میں اس کی قیمتیں مختلف ہیں ، ہم پاکستان کا موازانہ جنوبی ایشیاءکے ممالک سے کریں تو پاکستان بھارت اور بنگلہ دیش کی نسبت سستے معاہدے کے تحت گیس خرید رہا ہے۔