تسلیم کرتے ہیں نواز شریف تنخواہ کے اہل تھے،مگرکبھی وصول نہیں کی، خواجہ حارث کا بڑا اعتراف

قومی

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاناما نظرثانی کیس کی سماعت کے دوران نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث نے دلائل دیتے ہوئے کہا ہے کہ تنخواہ کو اثاثہ نہ سمجھنے کے باعث ظاہرنہیں کیاگیااورنوازشریف نے تنخواہ کادعویٰ کیانہ کبھی تنخواہ لی،جس پر جسٹس اعجاز افضل نے اپنے ریمارکس میں کہا ہے کہ تحریری طورپرکہیں نہیں لکھاکہ تنخواہ نہیں لی جائے گی،آپ کامطلب نوازشریف تنخواہ لینے کاارادہ نہیں رکھتے تھے؟لیکن تنخواہ کے معاہدے کی تحریری دستاویزموجود ہے، تحریری معاہدے کی موجودگی میں زبانی بات کیسے مان لیں؟،جسٹس اعجاز افضل نے کہا کہ پہلے تنخواہ زیادہ لکھی گئی پھرکمی کر کے 10 ہزاردرہم تنخواہ لکھی گئی ہے،قانون کے تحت تحریری بات کوزبانی بات پراہمیت حاصل ہے،جس پر نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث نے اپنے دلائل میں کہا کہ تسلیم کرتے ہیں کہ نوازشریف تنخواہ کے اہل تھے،مگرنوازشریف نے کبھی تنخواہ وصول نہیں کی۔