ملک میں دہشت گردی کی نئی لہر نے پوری قوم کو تشویش میں مبتلا کردیا ،سیہون شریف دھماکہ پر وزیر اعلیٰ سندھ مستعفیٰ ہوں:صدر ملی یکجہتی کونسل

قومی

حیدرآباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) ملی یکجہتی کونسل کے صدر اور جے یو پی کے سربراہ ڈاکٹر صاحبزادہ ابو الخیر محمد زبیر نے کہا ہے کہ سیہون شریف میں ہو نے والا بم دھماکہ ہر لحاظ سے قابلِ مذمت ہے ، ملک میں دہشت گردی کی نئی لہر نے  پوری قوم کو تشویش میں مبتلا کردیا ہے،سیہون شریف دھماکہ پر وزیر اعلیٰ سندھ مستعفیٰ ہوں، مزارات کو سیل کر نے پر عوام میں تشویش اور اشتعال پھیل رہا ہے ،صوبائی حکومت کراچی کے علاوہ اندرونِ سندھ رینجرز کو اختیار دینے کو تیار نہیں ، دہشت گردوں کو کچلنے کے لیے سیاسی مصلحتوں کو بالائے طاق رکھنا ہو گاورنہ قومی ایکشن پلان اور آپریشن ضربِ عضب کے ثمرات زائل ہو جائیں گے۔

مزید پڑھیں:پی ایس ایل نے دھوم مچا دی ،اگر سٹیڈیم میں بیٹھ کر یا پھراپنے گھر کے قریب ترین سکرین پر میچ دیکھنے کے خواہش مند ہیں تو یہ خبر آپ کیلئے ہے

حیدر آباد پریس کلب میں ملی یکجہتی کونسل کے رہنماوں کے  ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے  انہوں نے کہاکہ  ملک میں دہشت گردی کی نئی لہر نے  پوری قوم کو تشویش میں مبتلا کردیا ہے تاہم سیہون شریف میں بم دھماکہ کو بنیاد بناکر سندھ میں مزارات کو سیل کرنے سے عوام میں تشویش اور  اشتعال پھیل رہا ہے،دہشت گردی کی حالیہ کاروائیوں کے بعد قومی ایکشن پلان کو چلانے والی مقتدر قوتوں کو سوچنا ہو گا کہ ملک کو دہشت گردی سے کس طرح نجات دلائی جاسکتی ہے ؟۔انہوں نے کہاکہ سندھ حکومت کراچی کے علاوہ اندرونِ سندھ رینجرز کو اختیار دینے کو تیار نہیں  جبکہ پنجاب حکومت بھی آپریشن سے کترا رہی ہے جس سے دہشت گردوں کے حوصلے بلند ہو رہے ہیں ، دہشت گردوں کو کچلنے کے لیے سیاسی مصلحتوں کو بالائے طاق رکھنا ہو گاورنہ قومی ایکشن پلان اور آپریشن ضربِ عضب کے ثمرات زائل ہو جائیں گے ،  سیہون شریف وزیر اعلیٰ سندھ کا آبائی حلقہ ہے ،جب وزیر اعلیٰ مراد علی شاہ اپنے آبائی حلقہ میں عوام کی جان و مال کا تحفظ نہیں دے سکتے تو وہ سندھ کے عوام کو کیا تحفظ دیں گے ؟ اس لیے انہیں فوری طور پر مستعفٰی ہو جانا چاہیئے ۔

انہوں نے کہاکہ ان خبروں پر ہمیں تشویش ہے کہ حکومت کی صفوں میں را کے ایجنٹ اور دہشت گردوں کے سہولت کار موجود ہیں،  ملک کی عدالتوں میں اصلاحات لانا بھی ناگزیر ہو گیا ہے ، اگر فوجی عدالتوں کے قیام سے دہشت گردی پر قابو پایا جاسکتا ہے تو ایسا اب تک کیوں نہیں کیا جارہا ؟ انہوں نے کہاکہ ملی یکجہتی کونسل چیف آف آرمی اسٹاف سے مطالبہ کرتی ہے کہ وہ وزیرستان طرز کا آپریشن کریں اور ملک سے دہشت گردوں کا خاتمہ کریں اس موقع پر انہوں نے تین روزہ سوگ کا اعلان بھی کیا انہوں نے شہداء کے لواحقین اور زخمیوں کو معاوضہ دینے اور حضرت عثمان مروندی کے مزار پر سیکیورٹی انتظامات بہتربنانے کا مطالبہ بھی کیا ۔

مزید پڑھیں’مجھے نیا شوہر چاہیے جو۔۔۔‘ داعش کے مارے جانے والے کارکن کی بیوہ کا انٹرنیٹ پر ’اشتہار‘ ایسی بات لکھ دی کہ یورپی ممالک کے سکیورٹی اداروں میں کھلبلی مچ گئی کیونکہ۔۔۔