چوہدری شجاعت اس طرح سپریم کورٹ آئے جیسے ان کی ڈیوٹی لگائی گئی :دانیا ل عزیز

قومی

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )مسلم لیگ ن کے رہنما دانیال عزیز نے کہا ہے کہ جن لیڈروں کا پاناما کے ساتھ کوئی تعلق ہی نہیں تھا ،جس میں چوہدری شجاعت ،پیپلز پارٹی اور ایم کیو ایم کے رہنما اسطرح سپر یم کورٹ آئے ہوئے تھے جیسے ان کی ڈیوٹی لگائی گئی ہے ۔
انہوں نے کہا کہ پاناما کیس میں 24اگست 2016کو جماعت اسلامی کی درخواست 450لوگوں کے خلاف تھی،اس درخواست پر کسی قسم کا احتجاج نہیں ہوا ،29اگست کو عمران خان نے شریف خاندان کے خلاف درخواست دی تو اس کے بعد جماعت اسلامی نے بھی اپنی پہلی درخواست واپس لے کر صرف وزیر اعظم کے خلاف نئی درخواست سپریم کورٹ میں جمع کرا دی ،جماعت اسلامی کی یہ سوچ انتقامی کارروائی کی نشاندہی کرتی ہے ۔
سپریم کورٹ میں آج کی سماعت کے بعد میڈ یا سے گفتگو کرتے ہوئے دانیا ل عزیز نے کہا کہ آج کی سماعت میں ہمارے وکیل نے جے آئی ٹی کی رپورٹ کو رد کردیا ہے ،خواجہ حارث نے عدالت کو باور کرایا ہے کہ قانونی تقاضے پور ے کیے بغیر جے آئی ٹی کی رپورٹ کو لے کر آگے نہیں بڑھا جا سکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ عمران خان کو بھی قانون کے کٹہرے میں لا یا جائے ،اگر قانون کی بالا دستی کرنی ہے تو سب کے لیے کی جائے ،صرف شریف خاندان کے لیے نہیں ۔ان کا کہنا تھا کہ جے آئی ٹی نے غلط رپورٹ تیار کی ہے ،یہ چیز اب نہیں چلے گی اور عوام کی رائے محترم ہو گی ۔دانیا ل عزیز نے کہا کہ آئین کی بالادستی پارلیمنٹ کے ذریعے ہو گی ،اگر اس چیز کو کوئی نہیں سمجھ سکتا اور اپنے حلف کی پاسداری نہیںکرے گا تو عوام سب کچھ دیکھ رہی ہے ۔ اس موقع پر لیگی کارکنوں نے سپریم کورٹ میں نعر ے بازی بھی کی،میاں تیرا ایک اشارہ حاضر حاضر لہو ہمارا ۔دانیال عزیز نے مزید کہا کہ اس بات کی بھی تحقیقات ہونی چاہیے کو یہ کونسا انوکھا دباﺅ ہے جو صرف ایک شخص کے لیے استعمال ہوتا ہے ۔