وزیراعظم بجٹ سے قبل خاندانی اثاثے پاکستان لانے کا اعلان کریں:طاہر القادری

قومی

لاہور (آن لائن)پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ طاہر القادری نے کہا ہے کہ حکمرانوں نے بے تحاشا قرضے لیکر ملکی وقار رہین رکھ دیا اور غیر ملکی مداخلت کے دروازے کھول دیئے۔وزیر اعظم آئندہ مالی سال کے بجٹ میں اپنے خاندانی اثاثے پاکستان لانے کا اعلان کریں،جس ملک کا وزیر اعظم اپنے کھربوں روپے بیرون ملک رکھے اس ملک میں غیر ملکی سرمایہ کار اپنا پیسہ کیوں لائیں گے؟ کسان گندم پیدا کرکے اور نوجوان ڈگری حاصل کر کے بھی معاشی اعتبار سے بے حال اور بے روز گار ہیں۔معیشت قرضوں کی ادائیگی اور کرپشن کے خاتمے سے مضبوط ہوگی۔

بدترین لوڈ شیڈنگ جاری ، 4 سالوں میں بجلی کی پیداوار میں 6133 میگا واٹ کا اضافہ ہوا ،وزارت بجلی و پانی کا انوکھا دعویٰ سامنے آگیا

تفصیلات کے مطابق طاہر القادری کا پارٹی کے سینئر رہنماوں سے ٹیلیفونک گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ جس ملک میں غریب مریض دوائی اورمزدور کا بچہ تعلیم کے لیے ترسے اس ملک کے وزیر اعظم کوہر غیر ملکی دورہ پر 10ملین خرچ کرتے ہوئے شرم آنی چاہئیے۔ بجٹ کاغذی کارروائی ہے اس کاغذی کارروائی کے ذریعے غیر ملکی مالیاتی اداروں کو یقین دلایا جاتا ہے کہ ہم اپنے عوام کی کھال اتارنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑیں گے۔ انہوں نے کہا ہے کہ معاشی استحکام کے دعوے پانامہ کی منی ٹریل کی طرح جھوٹ کا پلندہ ہیں،جس ملک کا کسان صنعتکار اور مزدور حکومتی مظالم پر سراپا احتجاج ہو وہاں معیشت مستحکم کیسے ہو سکتی ہے جبکہ دنیا بھر کی جمہوری حکومتیں قومی وسائل تعلیم،صحت،انصاف،سوشل سیکورٹی پر خرچ کرتی ہیں مگر کرپٹ اور کمشن خور حکمران اپنے کمشن اور ذاتی کاروبار چمکانے کے لیے قومی دولت سڑکوں پر خرچ کر رہے ہیں
طاہر القادری نے کہا کہ پاکستان کے کروڑوں غریب خاندانوں کے حالات میں کوئی تبدیلی نہیں آئی وہ آج بھی بھوکے رہ کر بجلی،گیس کے بل اور پرائیویٹ سکولوں کی فیسیں دینے پر مجبور ہیں لیکن جب تک قاتل حکمران اور یہ ظالم نظام مسلط ہے غریب کا استحصال ہوتا رہے گا اور ملک قرضوں کی چکی میں پستا رہے گا۔