کوئٹہ میں پشین سٹاپ کے قریب دھماکہ ,پاک فوج کے 8 جوانوں سمیت 15 افراد شہید ، 25 زخمی ہوگئے

کوئٹہ

کوئٹہ (ڈیلی پاکستان آن لائن) بلوچستان کے صوبائی دارلحکومت کوئٹہ میں پشین سٹاپ کے قریب دھماکہ ہو اہے جس میںپاک فوج کے 8 جوانوں اور 7 عام شہریوں سمیت 15افراد جاں بحق ہو چکے ہیں جبکہ 25 سے زائد افراد زخمی ہوگئے ہیں ، ہلاکتوں اور زخمیوں کی تعداد میں اضافے کا خدشہ ہے جبکہ زیادہ تر زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے ۔دھماکہ سیکورٹی فورسز کی بس کو  نشانہ بنانے کے لئے کیا گیا ، دھماکے کے زخمیوں میں سیکورٹی فورسز کے اہلکار بھی شامل ہیں۔دھماکے کے تمام زخمیوں کو ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے  جبکہ سیکورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے۔  
تفصیلات کے مطابق کوئٹہ کے پشین سٹاپ پر سیکورٹی فورسز کی بس کے قریب  بم دھماکہ ہوا ، ابتدائی معلومات کے مطابق دھماکے کے نتیجے میں17افراد شہید جبکہ28 سے زائد افراد زخمی ہوئے ہیں جنہیں سول ہسپتال کوئٹہ منتقل کردیا گیا، 10کے قریب زخمیوں کی حالت اتنہائی تشویشناک ہے جس کے باعث ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔  دھماکے کے نتیجے میں اردگرد  کھڑی 2 گاڑیوں 4 رکشوں اور 6 موٹر سائیکلوں میں آگ لگ گئی ۔جبکہ پولیس اور سیکورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے اور دھماکے کی جگہ پر صرف ریسیکیو اہلکاروں کو جانے کی اجازت ہے۔ پشین سٹاپ ایک حساس جگہ جو کہ بلوچستان اسمبلی  کے قریب ہے جبکہ جائے دھماکہ کے قریب  ایف سی ہاسٹل اور ایک نجی ہسپتال بھی موجود ہے۔ دھماکے کے بعد   ریسیکو کی گاڑیاں جائے حادثہ کی جانب جا رہی ہیں جو زخمیوں کو سول ہسپتال منتقل کرر ہی ہیں۔ دھماکے کی آواز دور دور تک سنی گئی جبکہ جائے حادثہ سے دھویں کے بادل اٹھتے ہوئے دکھائے دے رہے ہیں۔ آگ بھجانے کے لئے فائر بریگیڈ کی تین گاڑیاں آگ پر قابو پانے میں مصروف ہیں۔

وزیر داخلہ بلوچستان سرفراز بگٹی  کا کہنا تھا کہ اس وقت ہمیں دھماکے کی نوعیت کا انتظار نہیں ہے، دھماکے کے بعد گاڑیوں میں آگ لگی ہوئی ہے جس سے اندازہ ہو رہا ہے کہ دھماکہ بڑی نوعیت کا ہے، ہم اس وقت ریسکیو عمل پر فوکس کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ دھماکے کے بعد تمام ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے جبکہ اس دھماکے کے حوالے سے پہلے سے اطلاعات تھیں۔

ترجمان بلوچستان حکومت نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ دھماکہ شدید نوعیت کا ہے جو کہ نجی ہسپتال کے قریب ہوا جس سے زخمیوں کی تعداد بڑھنے کا خدشہ ہے۔