”چیمپینز ٹرافی جتوانے میں سب سے اہم کردار وہاب ریاض اور احمد شہزاد نے ادا کیا ہے کیونکہ۔۔۔“ سوشل میڈیا صارفین نے ایسی بات کہہ دی کہ جان کر آپ ناچاہتے ہوئے ان دونوں کا تہہ دل سے شکریہ ادا کریں گے

کھیل

لندن (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان نے آئی سی سی چیمپینز ٹرافی جیت کر تاریخ رقم کر دی ہے اور اس میں کوئی شک نہیں نوجوان کھلاڑیوں نے جیت میں اہم کردار ادا کیا مگر بھارتی سوشل میڈیا صارفین نے احمد شہزاد اور وہاب ریاض پر بڑا ”الزام“ لگاتے ہوئے انہیں اپنی شکست کی وجہ قرار دیدیا ہے۔ بھارتیوں کا خیال ہے کہ اگر یہ دونوں کھلاڑی ٹیم سے نہ نکلتے تو پاکستان کسی صورت فائنل نہیں جیت سکتا تھا۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔ شکست نے بھارتی کرکٹ ٹیم میں پھوٹ ڈال دی؟ پاکستان کیخلاف چھکوں کی برسات کرنے والے ہردیک پانڈیا نے میچ کے بعد ایسا پیغام جاری کر دیا کہ پورے بھارت میں ہلچل مچ گئی
احمد شہزاد اور وہاب ریاض چیمپینز ٹرافی میں بھارت کے خلاف پاکستان کے افتتاحی میچ کیلئے ٹیم کا حصہ تھے اور دونوں نے ہی انتہائی خراب کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ اس میچ میں وہاب ریاض سب سے مہنگے باﺅلر ثابت ہوئے جنہوں نے 8.4 اوورز میں 87 رنز دئیے جن میں 2 چھکے اور 11 چوکے بھی شامل تھے اور جب بیٹنگ کی آئی تو احمد شہزاد 38 قیمتی گیندیں کھیل کر صرف 12 رنز بنا کر چلتے بنے۔
اس میچ کے دوران ہی وہاب ریاض ان فٹ ہوئے اور پھر ڈاکٹر نے انہیں آرام کا مشورہ دے کر گھر جانے کی ”نوید“ سنا دی اور یوں وہ وطن واپس آ گئے۔ اس طرح احمد شہزاد کو ڈراپ کر کے ان کی جگہ فخر زمان کو ٹیم میں شامل کرنے اور وہاب ریاض کی جگہ جنید خان کو ٹیم میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا گیا جو آخری میچ تک درست ثابت ہوا اور جس نے بھی یہ فیصلہ کیا ہے قوم اس کی تہہ دل سے شکرگزار ہے۔
فخر زمان نے جنوبی افریقہ کیخلاف میچ میں 23 گیندوں پر 6 چوکوں کی مدد سے 31 رنز بنائے جبکہ جنید خان نے 9 اوورز میں 53 رنز دے کر 2 وکٹیں حاصل کیں۔ اس کے بعد مقابلہ ہوا سری لنکا سے، جس میں جنید خان نے 10 اوورز میں 40 رنز دے کر 3 وکٹیں حاصل کیں جبکہ فخر زمان نے 56 گیندوں پر 1 چھکے اور 8 چوکوں کی مدد سے 50 رنز بنائے۔
پھر باری آئی میزبان اور ٹورنامنٹ کی سب سے خطرناک سمجھی جانے والی ٹیم انگلینڈ کی جس کیخلاف شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے جنید خان نے 8.5 اوورز میں 42 رنز کے عوض 2 وکٹیں حاصل کیں جبکہ فخر زمان نے 89 گیندوں پر 57 رنز بنائے اور فائنل کا ٹکٹ کٹوانے میں اہم کردار ادا کیا۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔ ”خدا کا واسطہ ہے اب بس کر دو۔۔۔!“ ہربھجن سنگھ نے شکست کے بعد پاکستانیوں کے سامنے ہاتھ جوڑ دئیے، کس بات سے روک رہے ہیں؟ جان کر آپ بھی کہیں گے”پہلے شروع کیوں کیا تھا؟“
اور پھر فائنل میں جس قدر بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا گیا وہ سب کے سامنے ہے۔ پاکستان نے پہلے بیٹنگ کی اور احمد شہزاد کی جگہ ٹیم میں شامل ہونے والے فخر زمان نے 142 رنز پر 3 چھکوں اور 12 چوکوں کی مدد سے 114 رنز بنائے اور پھر جب باﺅلنگ کی باری آئی تو وہاب ریاض کی جگہ ٹیم میں شامل ہونے والے جنید خان کا جادو بھی خوب چلا جنہوں نے 6 اوورز میں 20 رنز دے کر 1 کھلاڑی کو پویلین کی راہ دکھائی۔
اس تمام صورتحال اور کارکردگی کو سامنے رکھا جائے تو نا چاہتے ہوئے بھی بھارتی سوشل میڈیا صارفین کی ہاں میں ہاں ملانے کو دل چاہتا ہے کہ وہ سچ ہی کہہ رہے ہیں۔ اگر یہ دونوں کھلاڑی فائنل میچ کیلئے قومی ٹیم میں شامل ہوتے تو ناجانے کیا ہو جاتا۔ پاکستانیوں کیلئے خوشی کی بات یہ ہے کہ انضمام الحق نے فاتح ٹیم میں بڑی تبدیلیاں نہ کرنے کا عندیہ بھی دیدیا ہے اور اب یوں محسوس ہوتا ہے کہ دونوں کو ٹیم میں واپس آنے کیلئے سخت محنت کرنا ہو گی۔