پنجاب میں لاک ڈاؤن، دکانیں شام 5بجے بند کرنے کا فیصلہ، پولیس میں 10ہزار نئی بھرتیاں، 25لاکھ خاندانوں کیلئے 10ارب کا امدادی پیکیج

  پنجاب میں لاک ڈاؤن، دکانیں شام 5بجے بند کرنے کا فیصلہ، پولیس میں 10ہزار نئی ...

  

لاہور (جنرل رپورٹر) پنجاب حکومت نے صوبے بھر میں لاک ڈاؤن کی حکمت عملی تبدیل کرتے ہوئے (آج)بدھ سے دکانیں صبح 9 سے شام 5 بجے تک کھولنے کا فیصلہ کیا ہے۔صوبائی حکومت کے فیصلے کے مطابق پنجاب میں اشیائے ضروریہ کی تمام دکانیں کھولنے کے اوقات کار تبدیل کر دئیے گئے ہیں۔ صوبے بھر میں یکم اپریل سے اشیائے ضروریہ کی دکانوں کا وقت صبح نو سے شام پانچ بجے ہوگا، تاہم میڈیکل سٹورز اور فارمیسی کو اس سے استثنیٰ ہوگا۔اس سے قبل پنجاب حکومت نے تمام دکانیں صبح 8 بجے سے رات 8 بجے تک کھولنے کا فیصلہ کیا تھا۔گزشتہ روز صوبائی وزیر راجہ بشارت نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعلیٰ عثمان بزدارکی ہدایت پرکسی چیز کی کوئی کمی نہیں، پنجاب میں اس وقت صورتحال معمول پر ہے۔نئے اوقات کار کے مطابق جنرل سٹو ر، گروسری اور کریانے کی دکانیں صبح 9بجے سے شام 5بجے تک کھلیں گی۔ میڈیکل سٹور اور فارمیسی کو نئے اوقات کار کی پابندی سے استثنیٰ حاصل ہوگا۔نئے اوقات کار پر یکم اپریل سے عملدرآمد شروع ہوگا۔ نئے اوقات کار کا فیصلہ عوام کی صحت او رزندگی کے تحفظ کے لئے کیا گیاہے۔عوام کی صحت اور زندگی کے تحفظ کے لئے تمام ممکنہ اقدامات کرتے رہیں گے

دکانیں بند

لاہور(جنرل رپورٹر) وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے کرونا وائرس کی مہم کے دوران دفعہ 144کی خلاف ورزی کرنے والے تمام شہریوں کو رہا کرنے کا حکم دے دیا،پنجاب انصاف امداد پروگرام آج سے شروع ہوگا، مستحق امیدوار آن لائن یاایس ایم ایس کے ذریعے اپلائی کریں گے اور تصدیق کے بعد 4ہزار روپے فی خاندان ادا کئے جائیں گے، صوبہ بھر کی مساجد اورمدارس میں جراثیم کش سپرے کیاجائے گا،سیمنٹ فیکٹریوں کو کرونا وائرس کی وجہ سے عائدپابندیوں سے مستثنیٰ کر دیا گیا ہے۔پنجاب سول سیکرٹریٹ کے دربار ہال میں کابینہ کمیٹی برائے انسداد کرونا کے اجلاس کے بعد میڈیاکو بریفنگ دیتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے بتایا کہ پنجاب انصاف امداد پروگرام کے تحت 25لاکھ خاندانوں کو فی کس 4ہزار روپے مالی امداد دی جائے گی جس کے لئے 10 ارب روپے مختص کئے جا چکے ہیں۔انصاف امداد حاصل کرنے کے لئے فارم کے حصول اور جمع کروانے کے لئے کسی دفتر نہیں آنا پڑے گا بلکہ ایس ایم ایس یاآن لائن اپلائی کیا جاسکے گا۔پروگرام کو فول پروف اور کرپشن فری بنانے کے لئے کسی قسم کی سرکاری مداخلت نہیں ہوگی۔امیداوار کے کوائف کی تصدیق کے بعد انہیں 4ہزار روپے ادا کردئیے جائیں گے۔وزیراعلیٰ نے بتایا کہ محکمہ لوکل گورنمنٹ صوبہ بھر میں نمازیوں اور طلبہ کی صحت کے تحفظ کے لئے تمام مساجد اور مدارس میں جراثیم کش ادویات کا سپرے کر ے گا۔ کرونا وائرس سے بچاؤ کے لئے جاری مہم کے دوران دفعہ 144کی خلاف ورزی پر گرفتار شہریوں کو رہا کردیا جائے گا تاہم عوام اپنی اور دوسروں کی صحت کے تحفظ کے لئے بلاضرورت گھر سے باہر آنے سے گریز کریں اور اپنے آپ کو ہر صورت میں محدود رکھیں۔ پنجاب میں 100بیڈز پر مشتمل ایکسپو سنٹر فیلڈ ہسپتال کل سے فنکشنل ہوجائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ پنجاب میں صورتحال کنٹرول میں ہے اور حالات انشاء اللہ بہتری کی طرف جائیں گے۔ کابینہ کمیٹی برائے انسداد کرونا کے اجلاس میں مجموعی صورتحال کا جائزہ لیاگیا ہے اور قابل عمل سفارشات اورتجاویز پر غور کیا گیا،کرونا ویکسین کی تیاری کے لئے طبی ماہرین اور محققین کو تمام تروسائل مہیا کریں گے۔ہوم قرنطینہ کے ایس او پیز چین سے آنے والے ڈاکٹروں سے مشاورت کے بعد جاری کئے جائیں گے۔صوبہ بھر کے ہسپتالو ں اور قرنطینہ سنٹر وغیرہ میں پرسنل پروٹیکشن ایکویپمنٹ کی فراہمی کے لئے ہر ضلع میں ڈسٹرکٹ کمیٹی قائم کی جا رہی ہے جس میں ڈپٹی کمشنر سمیت دیگر اعلیٰ حکام شامل ہوں گے۔ یہ کمیٹیا ں ایس او پی کے مطابق پرسنل پروٹیکشن ایکویپمنٹ کی فراہمی کا فیصلہ کریں گی۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ پنجاب میں تقریباً 1200تک ٹیسٹ روزانہ کئے جا رہے ہیں۔ہر ڈ ویژن میں بی ایس ایل تھری لیول لیب فنکشنل ہونے کے بعد ہم روزانہ 5سے 7ہزار کرونا ٹیسٹ کی استعداد حاصل کرسکیں گے۔ کرونا کے خلاف جاری مہم میں برسر پیکار ڈاکٹر ز، ہیلتھ پروفیشنلز،صحافی اور دیگر ڈیوٹیاں سرانجام دینے والے افسر میرے لئے قابل قدر ہیں میں ان کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ ذخیرہ ا ندوزوں سے نمٹنے کے لئے موثرمہم جاری ہے۔اشیائے ضروریہ کی فراہمی کسی صورت میں متاثر کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔نا گہانی صورتحال سے نمٹنے کے لئے ہنگامی پلان بھی تیار کر لیا گیاہے۔ حکومت پنجاب نے کرونا کے علاج کے لئے سب سے پہلے ڈاکٹر طاہر شمسی سے رابطہ کیااور مشاورت کی۔یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز میں ہمارے ماہرین کرونا وائرس کے سدباب کے لئے دن رات تحقیق کر رہے ہیں مجھے یقین ہے کہ انشاء اللہ پاکستان سب سے پہلے مدافعت پیدا کرنے والی ویکسین تیار کرنے میں کامیاب ہوگا۔صورتحال کے پیش نظر پولیس میں فوری طور پر 10 ہزار سے زائد بھرتیاں کی جائیں گی۔ منظور شدہ خالی آسامیوں کومراحلہ وار پر کیا جائے گا۔ پولیس کے انویسٹی گیشن اور آپریشنل امور کے لئے 25 کروڑ روپے فراہم کئے جائیں گے۔ پولیس کے لئے 500 سنگل کیبن پک اپ گاڑیاں خریدی جائیں گی۔ اگلے بجٹ میں مزید 182 گاڑیاں خریدنے کے لئے 75 کروڑ 57 لاکھ روپے فراہم کئے جائیں گے۔ 45تھانوں کی زیر تعمیر عمارتیں مکمل کر کے فعال کی جائیں گی۔ 101تھانوں کو سرکاری اراضی منتقل کرکے نئی عمارتیں تعمیر کی جائیں گی۔ پولیس کے خدمت مراکز کو دور جدید کے تقاضوں سے ہم آہنگ کریں گے۔پولیس کو پبلک فرینڈلی بنانے کے لئے تمام تر اقدامات کریں گے۔قبل ازیں وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارنے سول سیکرٹریٹ میں قائم کرونا کرائسسز مینجمنٹ سیل کا دورہ کیا۔ وزیراعلیٰ عثمان بزدار کو بتایا گیاکہ کرونا کرائسسز مینجمنٹ سیل میں عالمی، قومی، صوبائی او راضلاع کی سطح پر صورتحال کاجائزہ لیا جا رہاہے۔ایڈیشنل چیف سیکرٹری داخلہ مومن علی آغا نے وزیراعلیٰ کو کورونا کرائسسز مینجمنٹ سیل کے بارے میں تفصیلی بریفنگ دی۔علاوہ ازیں وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار سے سول سیکرٹریٹ میں کرونا وائرس پر ریسرچ کیلئے قائم ایکسپرٹ فورم کے کنونیر پروفیسر ڈاکٹر محمود شوکت، یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر جاوید اکرم اوردیگر ماہرین نے ملاقات کی۔اس موقع پر وزیراعلیٰ عثمان بزدار کو بتایا گیاکہ پنجاب میں پرسنل پروٹیکشن ایکوپمنٹ کی مقامی سطح پر تیاری شروع کر دی گئی۔وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے مقامی سطح پر تیار کردہ پرسنل پروٹیکشن ایکوپمنٹ کی تیاری کا عمل تیز کرنے کی ہدایت کی اورکہاکہ کرونا وائرس پر ریسرچ کے لئے تمام تروسائل فراہم کئے جائیں گے۔پنجاب مقامی سطح پر کرونا وائرس کی ویکسین تیار کرنے والا پہلا صوبہ ہوگا۔ حفاظتی کٹ او ردیگر ضروریات مقامی طو رپر پوری کرنے کی صلاحیت جلد حاصل کر لی جائے گی۔ مقامی سطح پر تیار کردہ پی پی ای اور ویکسین موثر اور ارزاں نرخوں پر دستیاب ہوگی۔

سردار عثما ن بزدار

مزید :

صفحہ اول -