الخدمت کے تحت 22ہزار خاندانوں میں راشن اور کھانا تقسیم

الخدمت کے تحت 22ہزار خاندانوں میں راشن اور کھانا تقسیم

  

حیدر آباد(بیورورپورٹ)الخدمت فاؤنڈیشن کے تحت اندرون سندھ کے اضلاع میں لاک ڈاؤن سے متاثرہ 22ہزار سے زاید افراد میں ایک کروڑ روپے مالیت کا راشن اور تیار کھانا تقسیم کیاگیا ہے، سکھر میں قائم قرنطینہ سینٹر میں الخدمت کی 3ایمبولینس کسی بھی ایمرجنسی کے لیے 24گھنٹے موجود ہیں، سینٹر میں خدمات انجام دینے والے طبی عملے کو صاف پانی، ریفریشمنٹ اور چائے کی فراہمی جاری ہے، اندرون سندھ کے اضلاع میں فیس ماسک،سینیٹائزر،ہاتھ دھونے کی سرگرمیوں کا سلسلہ جاری ہے،الخدمت کے 3اسپتال اور 5میڈیکل سینٹرز میں مریضوں کی اسکریننگ کا عمل جاری ہے۔تفصیلات کے مطابق کورونا وبا کے بعد وفاقی اور صوبائی حکومت کی جانب سے کیے گئے لاک ڈاؤن کے باعث لوگ گھروں میں قیدہوکر رہ گئے ہیں، ان میں لاکھوں خان گزر بسر روزانہ کی اجرت پر تھی، الخدمت فاؤنڈیشن سندھ کے تمام اضلاع میں ایسے خاندانوں کو راشن اور تیار کھانا فراہم کرنے کا سلسلہ جاری رکھا ہوائے،اب تک 22ہزار خاندانوں کوراشن اور تیار کھانا فراہم کیاجاچکاہے، کورونا وبا کے خطرات سے آگاہی کے لیے 700مقامات پر بینر،5ہزار پمفلٹ تقسیم،5ہزار فیس ماسک،2ہزار صابن اور سینیٹائزرتقسیم کیے جاچکے ہیں،سکھر میں قائم قرنطینہ سینٹر میں طبی عملے کو 1000حفاظتی لباس فراہم کیے گئے، پیرا میڈیکل اسٹاف کے لیے چائے، پانی اور ریفریشمنٹ بدستور جاری ہے۔،الخدمت کے 3اسپتال اور 5میڈیکل سینٹرز میں مریضوں کی اسکریننگ کا عمل جاری ہے، الخدمت کے ہزاروں رضاکار سندھ حکومت سے تعاون کے لیے ہر وقت تیار ہیں،مقامی ذمے داران ضلعی انتظامیہ سے رابطے میں ہیں،گزشتہ دنوں الخدمت ہیلتھ فاؤنڈیشن کے وفد نے ڈاکٹر حفیظ الرحمن کی قیادت میں ڈپٹی کمشنر کو اپنی خدمات پیش کی تھیں۔الخدمت فاؤنڈیشن سندھ کے صدر ڈاکٹر سید تبسم جعفری نے مخیر حضرات سے اپیل کی ہے کہ اس موقع پر متاثرین کی مدد کے لیے آگے آئیں، اناج، راشن اورنقد عطیات الخدمت کے دفاترمیں جمع کرائیں،سندھ بھر میں پھیلے ہوئے الخدمت کے رضاکار مستحقین کے گھروں تک فوری راشن پہنچانے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مشکل و امتحان کی اس گھڑی میں پوری قوم متحد ہوکرکورونا جیسی وبا سے نمٹنے کے لیے پرعزم ہے،ڈاکٹر سید تبسم جعفری نے عوام سے اپیل کی کہ وہ گھروں میں رہیں،استغفار کریں،حکومت کی جانب سے جاری ہدایات پر اپنے لیے، اپنے اہلخانہ، اہل محلہ کے لیے عمل کریں، باہر نکلنے اور ہاتھ ملانے سے پرہیز کریں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -