کیا کسی کو 2 دفعہ کورونا وائرس ہوسکتا ہے؟ انسان کے صحت مند ہونے کے بعد کتنے دن تک یہ جسم میں رہتا ہے؟ وہ تمام باتیں جو آپ جاننا چاہتے ہیں

کیا کسی کو 2 دفعہ کورونا وائرس ہوسکتا ہے؟ انسان کے صحت مند ہونے کے بعد کتنے دن ...
کیا کسی کو 2 دفعہ کورونا وائرس ہوسکتا ہے؟ انسان کے صحت مند ہونے کے بعد کتنے دن تک یہ جسم میں رہتا ہے؟ وہ تمام باتیں جو آپ جاننا چاہتے ہیں

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کے متعلق لوگوں کے ذہنوں میں درجنوں سوالات ہیں۔ کوئی شخص اس موذی وباءمیں مبتلا ہو کر صحت مند بھی ہو جائے تو مزید سوال اٹھ کھڑے ہوتے ہیں آیا وہ اب بھی دوسروں کو اس وائرس میں مبتلا کر سکتا ہے یا اسے دوبارہ وائرس لاحق ہو سکتا ہے؟اب ماہرین نے ان سوالوں کے جوابات دے دئیے ہیں۔ ٹیلیگراف کے مطابق ماہرین کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کی علامات ظاہر ہونے کے بعد 10دن تک ان سے دوسروں کو وائرس منتقل ہونے کا خطرہ سب سے زیادہ ہوتا ہے۔ اس کے بعد علامات ختم ہو جائیں اور آدمی صحت مند بھی ہو جائے تو وائرس اگلے 16دن تک اس کے جسم میں موجود رہتا ہے۔ کچھ ایسے کیس بھی دیکھے گئے ہیں جن میں علامات ظاہر ہونے کے 37دن بعد تک وائرس مریض کی سانس کی نالی میں موجود رہا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر مریض کو علامات ظاہر ہونے کے پہلے 10دن کے بعد کھانسی اور چھینکیں وغیرہ نہیں آ رہیں تو ان سے وائرس دوسرے لوگوں کو منتقل ہونے کا خطرہ بہت کم ہوتا ہے۔ دوسرے سوال کا جواب ماہرین نے یہ دیا ہے کہ جب ایک بار کوئی شخص کورونا وائرس میں مبتلا ہوتا ہے تو اس کے جسم میں اینٹی باڈیز پیدا ہو جاتی ہیں جو وائرس کے خلاف کام کرتی ہیں۔ دوسری بار لوگوں کے وائرس میں مبتلا ہونے کا امکان کم ہوتا ہے لیکن اگر کسی کو دوبارہ وائرس لاحق ہو جائے تو اس میں بہت معمولی علامات ظاہر ہوتی ہیں۔ دنیا میں لاکھوں لوگ وائرس میں مبتلا ہو رہے ہیں جن میں سے بہت کم لوگوں کو دوبارہ وائرس لاحق ہونے کا امکان ہو گا۔ اگرچہ یہ وائرس زیادہ لوگوں کے لیے خطرناک نہیں ہے لیکن جن لوگوں میں اس کی علامات شدید ہو جائیں ان کے لیے جان لیوا ثابت ہوتا ہے، چنانچہ سب سے بہتر امر یہی ہے کہ اس سے احتیاط کی جائے۔ سماجی میل جول کم کیا جائے تاکہ اس آپ کو وائرس لاحق ہونے کا خطرہ کم سے کم ہو۔

مزید :

بین الاقوامی -کورونا وائرس -