وصول کی گئی تنخواہیں اساتذہ سے واپس نہ لینے کے حکم میں توسیع

 وصول کی گئی تنخواہیں اساتذہ سے واپس نہ لینے کے حکم میں توسیع

  

لاہور(نامہ نگار)لاہور ہائی کورٹ کے مسٹرجسٹس مزمل اختر شبیر نے ٹائم سکیل پروموشن کی مد میں وصول کی گئی تنخواہیں اساتذہ سے واپس نہ لینے کے اپنے حکم میں توسیع کرتے ہوئے آئندہ سماعت پر فریقین کے وکلاء کو بحث کے لئے طلب کرلیاعطاء محمداورملک محمد لطیف عاجز سمیت دیگر اساتذہ کی درخواست پر سماعت ہوئی،دوران سماعت سیکرٹری خزانہ، سیکرٹری سکولز ایجوکیشن سمیت دیگر فریقین کی جانب سے جواب داخل کروادیا،درخواست گزاروں کی جانب سے ڈاکٹر نصراللہ ستار پاشا ایڈووکیٹ نے موقف اختیارکیا کہ محکمہ فنانس نے گورنر پنجاب کی منظوری سے اساتذہ سمیت دیگر محکموں کو ٹائم سکیل پرموشن دینے کا نوٹیفکیشن جاری کیا، سکول اساتذہ کو بھی 19 اپریل 2019ء کو ٹائم سکیل پرموشن دیا گیا  نوٹیفکیشن کے تحت اساتذہ اضافی تنخواہ اور مراعات حاصل کرتے ریے، محکمہ فنانس نے گورنر پنجاب کی منظوری کے بغیر ہی ٹائم سکیل پرموشن واپس لے لیا،محکمہ فنانس نے ٹائم سکیل پرموشن کے تحت حاصل کی گئی اضافی تنخواہیں بھی واپس کرنے کا کہا ہے محکمہ فنانس نے بعض محکموں کے افسران کا نوٹیفکیشن واپس لیا اور بعض کا نہیں لیا،  عدالتی فیصلوں کے مطابق حاصل کی گئی اضافی تنخواہیں اور مراعات واپس نہیں ہوسکتیں، عدالت سے استدعاہے کہ محکمہ فنانس کا ٹائم سکیل پرموشن واپس لینے کا فیصلہ کالعدم قرار دیا جائے، درخواست میں یہ استدعا بھی کی گئی ہے کہ حتمی فیصلے تک درخواست گزاروں سے اضافی تنخواہیں واپس لینے کے نوٹیفکیشن پر عمل درآمد روکا جائے۔

توسیع

مزید :

صفحہ آخر -