ملک کس سمت جائیگا فیصلہ اتوار کو ہوگا، مجھے کہا گیا استعفی دیدیں، مگر میں آخری گیند تک مقابلہ کرتاہوں شکست نہیں مانونگا: عمران خان 

ملک کس سمت جائیگا فیصلہ اتوار کو ہوگا، مجھے کہا گیا استعفی دیدیں، مگر میں ...

  

 اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ اتوار کو  تحریک عدم اعتماد  پر ووٹنگ میں ملکی سمت کا فیصلہ ہوگا، استعفیٰ نہیں دوں گا، آخری گیند تک مقابلہ کروں گا۔قوم سے اپنے خطاب میں وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ  اتوار کو اس ملک کا فیصلہ ہونے لگا ہے کہ ملک کس طرف جائے گا، وہ لوگ جن پر سالوں سے کرپشن کے الزامات ہیں،نیب کیسز ہیں، قوم نے فیصلہ کرنا ہے کہ ملک کدھر جائیگا، مجھے کہا گیا کہ استعفیٰ دے دیں، میں آخری گیند تک مقابلہ کرتا ہوں، ہار نہیں مانوں گا، دیکھنا چاہتا ہوں کہ کون جا کر اپنے ضمیرکا فیصلہ کرتا ہے، اگر کسی کو ضمیر کے مطابق فیصلہ کرنا ہوتا تو استعفیٰ دیتے، ہم نوجوانوں کو آج کیا پیغام دے رہے ہیں، الٹا بھی لٹک جائیں تو کوئی نہیں مانیگا کہ یہ تین لوگ کوئی نظریاتی ہیں۔منحرف ارکان کو وزیراعظم کا کہنا تھاکہ ہمیشہ کیلئے آپ پر مہر لگ جانی ہے، نہ لوگوں نے آپ کو معاف کرنا ہے اور نہ بھولنا ہے، نہ ان کو معاف کرنا ہے جو ہینڈل کررہے ہیں، برصغیر کی تاریخ کیا ہے؟ میر صادق اور میر جعفر کون تھے جنہوں نے انگریزوں کے ساتھ مل کر اپنی قوم کو غلام بنایا، یہ موجودہ دور کے میر جعفر اور  میر صادق ہیں، آنے والی نسلیں معاف نہیں کریں گی، اگر آپ کا خیال ہے کہ اس سازش کو کامیاب ہونے دیں تو سامنے کھڑا ہوں گا، مجھے امید ہے کہ سندھ ہاؤس میں موجود ہمارے لوگ ضمیر کے مطابق فیصلہ کریں گے ورنہ قوم آپ کو معاف نہیں کرے گی، میں خاموش نہیں بیٹھوں گا، مجھے پرچی یا وراثت میں وزارت نہیں ملی، میں جدوجہد کرکے یہاں پہنچا ہوں، مقابلہ کروں گا۔انہوں نے کہا کہ 7 یا 8 مارچ کو ہمیں امریکا (ایک ملک) سے پیغام آیا، مجھے ملک کا نام نہیں لینا  تھا، ہے تو  یہ وزیراعظم کے خلاف، ان کو  پہلے سے  پتہ تھا کہ تحریک عدم اعتماد آرہی ہے جس سے ظاہر ہے کہ اپوزیشن کے پہلے سے ہی باہر کے لوگوں سے رابطے تھے، یہ پاکستان کی حکومت کے خلاف نہیں بلکہ عمران خان کے خلاف ہے، اْن کا کہنا ہے کہ اگر عمران خان چلا جاتا ہے تو ہم پاکستان کو معاف کردیں گے لیکن اگر تحریک ناکام ہوئی تو پاکستان کو مشکل کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ یہ  آفیشل دستاویز ہے جس میں پاکستانی سفیر کو کہا گیا کہ اگر عمران خان وزیراعظم رہا تو نہ صرف تعلقات خراب ہوں گے بلکہ پاکستان کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے، قوم سے پوچھتا ہوں کہ کیا یہ ہماری حیثیت ہے؟ کہا گیا کہ بعد میں جو لوگ آئیں گے ہمیں ان سے کوئی مسئلہ نہیں، روس جانے پر یہ سب کچھ کہا گیا۔وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ سب سے اہم بات یہ ہیکہ تین اسٹوجز کے ان سے رابطے ہیں۔ وزیراعظم نے اعتراف کیا کہ بدقسمتی سے ہمارے قانونی نظام میں طاقتوروں کو کٹھہرے میں لانے کی سکت نہیں ہے، بیرون ملک ان کی کرپشن کے خلاف خبریں چھپی ہوئی ہیں، اپنے ملک کے لیے اْن کا اخلاقی معیار یہ ہے کہ چھوٹی سی چیز پر کسی بھی عہدیدار کو نکال دیتے ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ انٹیلی جنس ایجنسیوں کو سب کے بیک گراؤنڈ کا پتہ ہوتا ہے، ان لیڈروں کے بارے میں انہیں سب پتہ ہے کہ ان کی جائیدادیں کہاں ہیں، یہ تین لوگ انہیں پسند آگئے ہیں، دو پارٹیوں کے دور حکومت میں 10 سال کے دوران 400 ڈرون حملے ہوئے انہوں نے کبھی مذمت تک نہیں کی، اس لیے یہ انہیں پسند ہیں، وکی لیکس میں مولانا فضل الرحمان کے بارے میں انکشاف ہوا کہ پاکستان میں امریکی سفیر کو مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ مجھے اقتدار دیں میں بھی وہی کروں گا جو دیگر کرتے ہیں، نواز شریف مودی سے چھپ چھپ کر ملتے تھے، شادیوں پر دعوتیں دیتے تھے، آصف زرداری نے کہا کہ فکر نہ کریں ڈرون حملے میں بے قصور لوگ مارے جاتے ہیں، شہباز شریف کے مطابق عمران خان نے ایبسلوٹلی ناٹ کہہ کر بڑی غلطی کی، ہم امن میں آپ کے ساتھ ہیں جنگ میں نہیں، ہم ایک آزاد خارجہ پالیسی چاہتے ہیں۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ بیرون ملک کئی پاکستانیوں کو جیلوں میں ڈالا گیا، کسی نے ان پر بات نہیں کی، میری ذمہ داری 22 کروڑ لوگ ہیں، میں نے ان کے لیے خارجہ پالیسی بنانی ہے، دستاویز کے بارے میں کہا گیا کہ یہ غلط ہے، پہلے ہم نے کابینہ میں اسے رکھا، اس کے بعد قومی سلامتی کونسل میں اسے رکھا، پھر پارلیمنٹ کمیٹی اور سینیئر صحافیوں کے سامنے لائے تاکہ بتائیں کہ اس میں کتنی خوفناک باتیں ہیں، یہ کہتے ہیں کہ عمران خان نے ملک خراب کردیا، مجھے تو ساڑھے تین سال ہوئے ہیں۔ان  کا کہنا تھا کہ خودداری ایک آزاد قوم کی نشانی ہوتی ہے، جہاں انصاف نہیں ہوتا وہ قومیں تباہ ہوجاتی ہیں، مسلمان قوم غلام نہیں بن سکتی، اللہ نے ہمیں اشرف المخلوقات بنایا ہے، فرشتوں سے بھی بڑا درجہ دیا ہے، لیکن ہم میں جب ایمان کی کمزوری ہوتی ہے اور ہم پیسے اور خوف کی پوجا کرتے ہیں تو چیونٹی کی طرح رینگنے لگتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہمارے بچپن میں ساری دنیا پاکستان کی مثالیں دیتی تھی، بعد میں  اپنے ملک کو ذلیل ہوتے دیکھا، اللہ نے اگر انسان کو اشرف المخلوقات بنایا ہے تو اس کی شرط رکھی ہے، نبی کریم  کا راستہ آسان نہیں تھا لیکن عظمت والا اور عزت والا راستہ تھا، اللہ نے ہمیں اسی راستے پہ چلنے کا حکم دیا ہے۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ میں نے ہمیشہ یہ کہا ہے کہ نہ میں کسی کے سامنے جھکوں گا نہ قوم کو جھکنے دوں گا، جب اقتدار میں آیا تو فیصلہ کیا کہ ہماری خارجہ پالیسی آزاد ہوگی یعنی پاکستان کے مفاد میں ہوگی، اس کا یہ مطلب نہیں کہ ہم کسی سے دشمنی چاہتے ہیں۔، جب جنرل مشرف نے پاکستان کو امریکا کی وار آن ٹیرر  میں لے جانے کا فیصلہ کیا تو کہا گیا کہ امریکا کہیں ہمیں بھی نہ ماردے، میں نے اس وقت بھی کہا کہ اس جنگ میں ہمارا کوئی لینا دینا نہیں، نائن الیون میں کوئی پاکستانی ملوث نہیں تھا، کسی کی جنگ میں پاکستانیوں کو کیوں قربان کریں۔ان کا کہنا تھا کہ افغان جنگ میں پاکستان نے جو قربانی دی کسی اور امریکی اتحادی نے نہیں دی، قبائلی علاقوں کو باقیوں سے بہتر جانتا ہوں، قبائلی علاقہ سب سے پر امن علاقہ تھا وہاں جرائم ہوتے ہی نہیں تھے، جو ہمارے فیصلے کے  بعد ان کے ساتھ ہوا اس کا اندازہ نہیں لگا سکتے، جنگ کے بعد وہاں کے لوگوں نے شدید مشکلات دیکھیں، ان قربانیوں کا پاکستان کو کوئی صلہ نہیں ملا،قبائلی علاقوں میں ڈرون حملے کیے گئے، افغانستان آزاد ہونے سے پہلے کی بات کررہا ہوں، ہمیں بار بار ڈومور کہا گیا، میں نے ہمیشہ اس جنگ کی مخالفت کی اور ڈرون حملوں پر آواز اٹھائی، اس وقت کسی بڑے سیاستدان نے آواز  نہیں اٹھائی کہ کہیں امریکا ناراض نہ ہوجائے، ہماری حکومتوں نے پوری طرح اس جرم میں شرکت کی، ڈرون حملوں میں مرنے والوں کے لواحقین ہم کو اس کا ذمہ دار سمجھتے رہے اور ہم پر حملے کرتے رہے۔

عمران خان

  اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی)قومی سلامتی کمیٹی نے غیر ملکی اہلکار کی جانب سے استعمال کی جانے والی زبان کو غیر سفارتی قرار دیتے ہوئے  اس پر تشویش کا اظہار کیااور کہاہے کہ ملک کے اندرونی معاملات میں بیرونی  مداخلت قابل قبول نہیں، غیرملکی مراسلہ پاکستان کے اندورنی معاملات میں کھلی مداخلت کے مترادف ہے،خط کا جواب سفارتی آداب کو مدنظر رکھ کر دیا جائے گا،پاکستان کو دھمکی دینے والے کو بھرپور جوابی ردعمل دینے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔ جمعرات کو  قومی سلامتی کمیٹی کا 37 واں اجلاس وزیراعظم کی زیر صدارت ہوا جس میں دفاع، توانائی، اطلاعات، داخلہ خزانہ، انسانی حقوق، منصوبہ بندی و ترقی کے وفاقی وزرا نے شرکت کی۔   اجلاس میں چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی، سروسز چیفس، معاون خصوصی قومی سلامتی سمیت سینئرحکام شریک ہوئے۔ اجلاس کے بعد قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس کا اعلامیہ جاری کیا گیا جس کے مطابق  قومی سلامتی کمیٹی  نے غیرملکی سفارتکار کی استعمال کی گئی زبان پرتشویش کا اظہار کیا اور کہاکہ پاکستان کے اندرونی معاملات میں کسی بھی طرح کی مداخلت ناقابل برداشت ہے اور جواب سفارتی آداب کو مدنظر رکھ کر دیا جائے گا۔قومی سلامتی کمیٹی کا کہنا تھا کہ قومی سلامتی کمیٹی کو پاکستانی سفیر سے ایک غیر ملکی اعلی عہدیدار کی باضابطہ بات چیت سے آگاہ کیا گیا جبکہ کمیٹی نے غیر ملکی اہلکار کی جانب سے استعمال کی جانے والی زبان کو غیر سفارتی قرار دیا۔قومی سلامتی کمیٹی کے مطابق غیرملکی مراسلہ پاکستان کے اندورنی معاملات میں کھلی مداخلت کے مترادف ہے اور پاکستان کے اندورنی معاملات میں مداخلت کسی بھی صورت قابل قبول نہیں۔ اجلاس میں پاکستان کو دھمکی دینے والے کو بھرپور جوابی ردعمل دینے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ مراسلے کے معاملے کو پارلیمان کی سیکیورٹی کمیٹی کے ان کیمرہ سیشن میں لایا جائے گا اور مراسلے کو پاکستان کے اندرونی معاملات میں کسی بھی طرح کی مداخلت ناقابل برداشت قرار دیا گیا۔ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ پاکستانی سفیر نے پیغام وزارت خارجہ کو ارسال کیا اور اس مراسلے پر جواب سفارتی آداب کو مد نظر رکھ کر دیا جائے گا۔ اجلاس میں کمیٹی شرکاء کو پاکستانی سفیر سے ایک غیر ملکی اعلیٰ عہدیدار کی باضابطہ بات چیت سے آگاہ بھی کیا گیا۔خیال رہے کہ 27 مارچ کو اسلام آباد میں جلسہ عام سے خطاب میں وزیراعظم عمران خان نے خط لہرایا تھا اور کہا تھاکہ ملک میں باہر سے پیسے کی مدد سے حکومت تبدیل کرنے کی کوشش کی جارہی ہے، ہمیں لکھ کر دھمکی دی گئی، میرے پاس خط ہے اور وہ ثبوت ہے۔وزیراعظم کے دعوے کے بعد اپوزیشن کی جانب سے خط سامنے لانے اور ایوان میں پیش کرنے کا مطالبہ زور پکڑ رہا ہے۔

قومی سلامتی کمیٹی

مزید :

صفحہ اول -