نیشنل بینک کے 73 ویں سالانہ اجلاس عام کا کراچی میں انعقاد

      نیشنل بینک کے 73 ویں سالانہ اجلاس عام کا کراچی میں انعقاد

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)نیشنل بینک  کا 73 واں سالانہ اجلاس عام کراچی میں منعقد ہوا۔ اجلاس  کوآن لائن الیکٹرانک ذرائع سے  شرکت کیلئے اوپن رکھا گیا۔ اجلاس میں چیئرمین زبیر سومرو اور صدر عارف عثمانی کے علاوہ بینک کے دیگر ڈائریکٹرز اور سینئر قیادت کے ساتھ ساتھ حصص یافتگان کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ حصص یافتگان نے بینک کی مالی کارکردگی کو سراہا کیونکہ بینک کی سال 2021 کیلئے کل آمدن 134.6 بلین روپے رہی جس میں 97.6 بلین روپے کی خالص انٹرسٹ آمدن  اور36.9 بلین روپے کی  نان فنڈ آمدن بھی شامل ہے۔افراط زر کے دباؤ کے باوجود آپریٹنگ اخراجات  سال بہ سال کی بنیاد پر 5فیصد کمی کے ساتھ 60بلین روپے رہے۔ اسی طرح قرضوں کے نقصانات اور دیگر چارجز 61فیصد کمی کے ساتھ 11.9بلین روپے رہے۔ بینک کے امریکہ میں آپریشن پر 9.8 بلین روپے کے جرمانے کے باوجود 52.9 بلین روپے کا قبل از ٹیکس منافع حاصل ہوا جو بینک کی تاریخ میں سب سے زیادہ منافع ہے۔2021 کیلئے  دیگر چارجز میں 2022 کیلئے 30.9بلین روپے کے مقابلے میں 19 بلین یا 62 فیصد کمی واقع ہوئی جو 11.92 بلین روپے رہے۔ جرمانے کی وجہ سے بینک کو 28 بلین روپے کا بعداز ٹیکس منافع حاصل ہوا جس میں سال بہ سال کی بنیاد پر 8 فیصد کمی واقع ہوئی۔ گزشتہ تین سال کے دوران 74.4 بلین روپے کے بعداز ٹیکس منافع کے ساتھ بینک کے خالص اثاثے 2019 کے آغاز پر  206.9 بلین روپے سے بڑھ کر 2021 کے اختتام پر 286.2 بلین روپے ہوگئے  جس کے باعث نئی انتظامیہ کی طرف سے چارج سنبھالنے کے بعد 2019 کے آغاز پر 97.2 روپے کے مقابلے میں بک ویلیو 135 روپے فی حصص رہی۔  بیلنس شیٹ کے حوالے سے بینک کے کل اثاثے 2019 کے 2.80 ٹریلین روپے کے مقابلے میں 3.85 ٹریلین روپے تک پہنچ گئے۔ صرف 2021 میں سال بہ سال کی ترقی 27.9 فیصد پر بلند رہی کیونکہ بینک کو 3ٹریلین روپے کے ڈیپازٹس کا سنگ میل حاصل ہوا جس میں 600 بلین روپے کا اضافہ ہوا۔ ان ڈیپازٹس میں سے 80 فیصد یا 477 بلین صارفین کے ڈیپازٹس تھے۔ بینک کی لیکویڈیٹی کوریج  کا تناسب 164 فیصد  جبکہ نیٹ سٹیبل ریشو 278 فیصد  رہا۔ اسی طرح سی ای ٹی۔1 کا تناسب اور کل سی اے آر بالترتیب 15.42فیصد اور 20.39 فیصد تھا جو بینک کی تاریخ میں سرمایہ کی بلند ترین سطح ہے۔ پی اے سی آر اے اور VIS کریڈٹ کریٹنگ کمپنی کی طرف سے بینک کیلئے  طویل المدت اور مختصر مدت کیلئے AAA/A1+ کیٹگریوں کی بلند ترین مقامی کریڈٹ ریٹنگ کی دوبارہ توثیق کی گئی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -