مجسٹریٹوں کا عدم تعاون ، پرائس کنٹرول کمیٹیوں نے ہاتھ کھڑے کردیئے

مجسٹریٹوں کا عدم تعاون ، پرائس کنٹرول کمیٹیوں نے ہاتھ کھڑے کردیئے

  

لاہور(جاوید اقبال) صوبائی دارلحکومت میں اشیاءخودونوش کی قیمتوں میں اعتدال رکھنے اور ذخیرہ اندوزی کی مانیٹرنگ کے لئے وزیر اعلیٰ پنجاب کی طرف سے قائم کی گئی پرائس کنٹرول کمیٹیوں کے چیئرمینوں نے ہاتھ کھڑے کر دیئے ہیں چیئرمینوں کا کہنا ہے کہ پرائس کنٹرول کمیٹیاں تو بنا دیں وائس چیئرمین اور چیئرمین بھی لگا دیئے گئے مگر اختیارات نہیں دیئے گئے جس سے ٹاﺅنوں کا ایک نائب قاصد بھی بات نہیں مانتا ٹاﺅنوں کی انتظامیہ اور پرائس کنٹرول مجسٹریٹس کے رحم و کرم پر چھوڑ دیاگیا ہے جو تعاون نہیں کرتے جب انہیں پرائس کنٹرول کمیٹیوں کے چیئرمین کسی جگہ ریڈ کرنے کا کہیں یا نشاندہی کریں تو ہر کوئی سنی ان سنی کر دیتا ہے یہی وجہ ہے کہ لاہور میں لوٹ مار ہورہی ہے اوورچارجنگ عروج پر ہے ناقص اور ملاوٹ شدہ اشیاءخودنوش کی بھی فروخت کی شکایات عام ہیں ذرائع نے بتایاہے کہ چیئرمینوں کی اکثریت نے وزیر اعلیٰ کو خط لکھ دیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ وہ اختیارات دیں یا وہ آفیسر ز جنہیں ٹاﺅن اور ڈسٹرکٹ کی سطح پر مجسٹریٹس کے پرائس کنٹرول کے اختیارات دیئے گئے ہیں انہیں چیئرمینوں کو جواب دہ بنایا جائے اگر یہ نہیں ہو سکتا تو انہیں فارغ کردیا جائے چونکہ افسر شاہی انہیں اپنا دشمن بنا دیتی ہے اور ان سے تعاون نہیں کرتی۔ مزید کہا گیا ہے کہ شہر میںاوور چارجنگ چیک اینڈ بیلنس نہ ہونے کے برابر ہے پرائس کنٹرول مجسٹریٹس اپنے دیگر کاموں میں مصروف ہیں یا پھر ان کا تمام ریڑھی بانوں تک کارروائی محدود رکھنا ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -