لوڈشیڈنگ علی باباچالیس چوروں کا کارنامہ ہے،زرداری ٹولے کو پنجاب کے عوام کیساتھ انتقامی کاروائی مہنگی پڑے گی ،شہباز شریف

لوڈشیڈنگ علی باباچالیس چوروں کا کارنامہ ہے،زرداری ٹولے کو پنجاب کے عوام ...

لاہور (ثناءنےوز) وزیراعلیٰ پنجاب محمدشہبازشریف نے کہا ہے کہ ملک میں توانائی کا بحران اور کرب ناک لوڈشیڈنگ علی بابا چالیس چوروں کا کارنامہ ہے۔ پنجاب میں 18 - 18گھنٹے کی لوڈشیڈنگ زرداری کی پنجاب کے عوام کے خلاف انتقامی کارروائی ہے۔ مجھے صوبائیت کا طعنہ دینے والوں سن لو میں اول اور آخر پاکستانی ہوں، این ایف سی ایوارڈ کی منظوری کے لئے پنجاب نے اپنا 11ارب روپے کا حصہ چھوڑ کرصوبائیت نہیں بلکہ قومی یکجہتی،اتحاد اور محبت کے رشتے مضبوط کرنے کی مثال قائم کی تھی۔کوٹ لکھپت میں بجلی کی طویل بندش کے خلاف احتجاجی مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے کہا کہ پنجاب کے ساتھ لوڈشیڈنگ کے حوالے سے سراسر زیادتی کی جارہی ہے۔ کراچی ہمارا روشنیوں کاخوبصورت شہر ہے،وہاں صنعتیں چھ دن چلتی ہیں جبکہ پنجاب میں صرف تین دن۔ پنجاب کے شہروں میں 18 - 18 گھنٹے لوڈشیڈنگ جبکہ کراچی میں ایک دن بھی نہ ہو، اسے کیسے ملک میں یکساں لوڈشیڈنگ کہاجاسکتاہے؟ انہوںنے زرداری ٹولے کو خبردار کیا کہ انہیں پنجاب کے عوام کے خلاف انتقامی کارروائی انتہائی مہنگی پڑے گی ۔ انہوں نے کہاکہ میں صوبائیت کا طعنہ دینے والوں کو یاد کراتاہوں کہ پنجاب نے ہمیشہ قومی یکجہتی کے عمل کو مستحکم کرنے کے لئے اپنا مثالی کردار اداکیاہے۔ این ایف سی ایوارڈ کی منظوری کے لئے اپنے حصے کے 11ارب روپے سے دستبردار ہونا اس کی روشن مثال ہے۔ انہوںنے کہاکہ حکمرانوں نے اپنی کالی کرتوتوں کی وجہ سے ملک کو اندھیروں میں دھکیل رکھاہے اور پوری قوم لوڈشیڈنگ کے دردناک عذاب سے گزر رہی ہے۔انہوںنے کہاکہ توانائی کا بحران کرپٹ مافیا کی لوٹ مار اور نااہلی کا نتیجہ ہے۔ انہوںنے کہاکہ ملک سے اندھیرے دور ہوں گے اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر میاں محمدنوازشریف کی قیادت میں وطن عزیز کو اندھیروں سے نکال کر اجالوں میں لائیں گے۔دریں اثناءوزیراعلیٰ پنجاب ٹینٹ آفس میں تاج پورہ، فتح گڑھ، ہربنس پورہ اور دیگر ملحقہ آبادیوں کے مسلم لیگ (ن) کے عہدیداران، کارکنوں اور رہائشیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ زرداری ٹولے نے پنجاب کے ساتھ ناانصافی اور ظلم و زیادتی کی انتہا کردی ہے ،پنجاب میں صنعتوں کو ساڑھے تین روز اور باہر صنعتوں کو چھ دن بجلی فراہم کی جاتی ہے، انہوں نے کہا کہ 18،18 گھنٹے بجلی کی بندش پر عوام احتجاج نہ کریں تو کیا کریں ،پرامن احتجاج عوام کا حق ہے، املاک کو ہر گز نقصان نہ پہنچایا جائے، میرٹ کے خلاف کوئی بھرتی نہیں ہوگی۔ وزیراعلیٰ نے اس موقعہ پر علاقے کی ترقی کیلئے مختلف ترقیاتی منصوبوں کا اعلان اور علاقہ کے عوام کا ترقیاتی منصوبوں پر وزیراعلیٰ کو زبردست خراج تحسین کیا۔وزیراعلیٰ نے ٹینٹ آفس میں مختلف اضلاع سے تعلق رکھنے والے سائلین نے بھی ملاقات کی۔ اس موقع پر انہوں نے کہا کہ پولیس نظام کی اصلاح کے لئے انقلابی اقدامات اٹھائے گئے ہیں لیکن اس کے باوجود عوام کو تھانے کچہری میں انصاف کے حصول میں دھکے پڑتے ہیں۔ پولیس افسران اپنے دفاتر غریب عوام کے لئے 24 گھنٹے کھلے رکھیں اور ان کی دادرسی کے لئے جانفشانی سے اپنے فرائض سرانجام دیں۔ انہوں نے کہا کہ ایسے معاشرے جہاں عوام کو انصاف فراہم نہ کیا جائے وہ صفحہ ہستی سے مٹ جاتے ہیں لہٰذا ہم سب کو انصاف کا بول بالا کرنا ہے اور عوام کو فوری اور سستے انصاف کی فراہمی اپنی اولین ترجیح بنانا ہوگا۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ عوامی مسائل حل نہ کرنے والے افسروں کو عہدوں پر رہنے کا کوئی حق نہیں۔ وزیراعلیٰ نے ٹینٹ آفس میں مختلف اضلاع سے تعلق رہنے والے سائلین کے مسائل سنے اور ان کے ازالے کے لئے موقع پرہی احکامات جاری کئے۔ وزیراعلیٰ نے مصنوعات کی برآمدات بڑھانے اور سٹار فارمز پراجیکٹ پر پیشرفت کا جائزہ لینے کے حوالے سے اجلاس کی صدارت بھی کی۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان زرعی ملک ہے اور اس کی بڑی آبادی کا روزگار بھی اسی شعبے سے وابستہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب حکومت کاشتکاروں کی بہتری اور زراعت میں جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کو فروغ دینے کے لئے ٹھوس اقدامات کررہی ہے۔ زرعی مصنوعات کی عالمی منڈیوں تک رسائل کے لئے سپلائرز فرموں اور کاشتکاروں کی استعداد کار بڑھانے کا پروگرام شروع کررکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب میں سٹار فارم پراجیکٹ کے زراعت کی ترقی پرمثبت اثرات مرتب ہوں گے۔

مزید : صفحہ اول


loading...