لاہور کو ایشیاء کا صاف ستھرا اور گندگی سے پاک شہر قراردیدیا گیا

لاہور کو ایشیاء کا صاف ستھرا اور گندگی سے پاک شہر قراردیدیا گیا

لاہور(جنرل رپورٹر)لاہور ویسٹ منیجمنٹ کمپنی کے منیجنگ ڈائریکٹر خالد مجید نے کہا ہے کہ لاہور کا شمار گندے شہروں کی فہرست سے نکل گیا ہے اور اب پاکستان کے دل کہلانے والے اس شہر کا شمار صاف ستھرے شہروں میں ہونے لگا ہے دنیا کے جن 27گندے شہروں کی فہرست علامی ادارے نے جاری کی ہے اس میں لاہور شامل نہیں ہے بلکہ اس فہرست میں لاہور کو ایشیا کا صاف ستھر ا اور گندگی سے پاک شہر قرار دیا گیا ہے ،یہی وجہ ہے کہ بھارت کے صوبہ ہریانہ کے وزیر اعلیٰ نے دواہ لاہور کے دوران یہاں کی صفائی سے متاثر ہو کر خادم اعلیٰ سے درخواست کی کہ وہ لاہور کے صفائی کے ماڈل کو اپنانا چاہتے ہیں لہذا ایک ٹیم بھارت بھیجی جائے اور بھارتی شہروں کو گندگی سے پاک کرنے کیلئے ان کی مدد کی جائے یہ شب و روز کی محنت اور لگن کا نتیجہ کہ لاہو رکا شمار صاف ستھرے شہروں میں ہونے لگا ہے وہ گزشتہ روز میڈیا کے ایک گروپ کو بریفنگ دے رہے تھے اس موقع پر کمپنی کے میڈیا منیجرجمیل خاور بھی موجود تھے۔ایم ڈی نے کہا کہ لاہو رسالڈ ویسٹ منیجمنٹ کمپنی لاہوریوں کو صفائی کی بہتری مفت سہولیات فراہم کر رہی ہے کمپنی نے کام چوری،پٹرول چوری روکنے کیلئے جدید بنیادوں پر عملی اقدامات کر کے دیکھا دیئے ہیں ،لاہور کی سٹرکوں اور گلی کوچوں میں کوڑا کرکٹ دو شفٹوں میں ہٹایا جاتا ہے اب گندگی کے ڈھیر شہر میں نظر نہیں آئیں گے۔ایک سافٹ وئیر کے ذریعے پورے لاہور کو مانیٹر کیا جا رہا ہے ،گندگی کے بارے میں موصول ہونے والے شکایات کا ایک گھنٹے میں کیا جا تا ہے۔خالد مجید نے کہا کہ کمپنی اب شہریوں کو چولہے جلانے کے سستی بائیو گیس بھی فراہم کرنے کیلئے عملی اقدامات کر رہی ہے جس کیلئے ابتدائی طور پر سرحدی گاؤں ایچو گل میں بائیو گیس کے پلانٹ میں کام شروع کر دیا ہے

اس پلانٹ سے پورے دیہات کو گیس فراہم کی جا رہی ہے انہوں نے کہا کہ دوسرا پلانٹ بھی جلد لگایا جا ئے گا۔ایم ڈی نے کہا کہ مون سون میں صفائی کو بہتر بنانے کیلئے اضافی انتظامات کر دیئے گئے ہیں24گھنٹے سینٹری ورکر کام کریں گے جن کی مانیٹرنگ میں خود کروں گا اور جس علاقے میں صفائی کا نظام ناقص پایا گیا اس کے زونل ہیڈ کو ملازمت سے فارغ کر دیا جائے گا ۔انہوں نے کہا کہ جلد 6شہروں میں لاہور ویسٹ منیجمنٹ کمپنی کے ماڈل کے تحت کام شروع کیا جائے گا تاہم ہم صرف انہیں کنسلٹنسی سروسز فراہم کریں گے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4