غیر ملکی ملازمین تیار ہو گئے لیکن سعودی حکومت نہ مانی، صاف انکار کر دیا

غیر ملکی ملازمین تیار ہو گئے لیکن سعودی حکومت نہ مانی، صاف انکار کر دیا
غیر ملکی ملازمین تیار ہو گئے لیکن سعودی حکومت نہ مانی، صاف انکار کر دیا

  

ریاض (مانیٹرنگ ڈیسک) سعودی وزارت محنت نے مالی فوائد کے عوض دوپہر کے وقت غیر ملکی مزدوروں سے کام لینے کی تجویز مسترد کردی ہے تاکہ مزدوروں کو دوپہر سے لے کر 3 بجے کے دوران براہ راست دھوپ میں کام کرنے سے بچایا جاسکے۔

مزید پڑھیں:وہ عرب ملک جس کے دروازے غیر ملکی ملازمین پر ہمیشہ کیلئے بند کر دیئے گئے

’’عرب نیوز‘‘ کے مطابق وزارت کی فیلڈ کمیٹیاں اس پابندی کو یقینی بنانے کیلئے کام کی سائٹوں کے دورے کریں گی۔ کمرشل، سرکاری، رہائشی اور دیگر تعمیراتی منصوبوں پر حکومتی اہلکار نظر رکھیں گے تاکہ ان جگہوں پر مزدوروں سے دوپہر کی دھوپ میں کام نہ کروایا جائے۔ وزارت کے متعین کردہ ضوابط کی خلاف ورزی کرنے والی کمپنیوں کو 3 سے 10 ہزار ریال جرمانے کا سامنا کرنا ہوگا جبکہ خلاف ورزی کرنے والی کمپنی کے کسی بھی پراجیکٹ کو مستقل طور پر بند بھی کیا جاسکتا ہے۔

کاؤنسل آف سعودی چیمبرز کے ساتھ الحاق شدہ سیکٹر کمیٹیوں کی طرف سے کوشش کی جارہی تھی کہ دوپہر کے وقت کام کی اجازت لی جاسکے، مگر وزارت کی طرف سے مذکورہ تجاویز مسترد ہونے کے بعد یہ معاملہ اختتام پذیر ہوچکا ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -