1914سے رہا ئش پذ یر کرسچن کو کا لو نی میں جگہ نہ دینا سمجھ سے با لا تر ہے

1914سے رہا ئش پذ یر کرسچن کو کا لو نی میں جگہ نہ دینا سمجھ سے با لا تر ہے

خیبر ایجنسی ( بیو رو رپورٹ ) 1914سے رہا یش پز یر کرسچن کو کا لو نی میں جگہ نہ دینا سمجھ سے با لا تر ہے کا لو نی کی تقسیم کسی صورت برداشت نہیں کرینگے ولسن وزیر کی کر پشن سے تمام مسیحی برادری بدنام ہو گئی ہے ملک ارشد مسیحی سینٹرل ایگزیکٹیو کمیٹی ممبر کا لنڈ ی میں صحا فیو ں سے اظہا ر خیال لنڈ ی کو تل میں زیر تعمیر کرسچن کا لو نی میں گھر حقدارں کو دیا جا ئے پو رے تحصیل لنڈی کو تل میں دو سو دس خاندان ہیں جس میں اکیس خا ندانو ں کو یہ گھر مل رہے ہیں اور ان ایکس گھر وں پرجو لا گت آرہی ہے تین کر وڑبیس ہزار جب کہ چا ہیے تو یہ سب کے لیے بنا ئی جا ئے سمجھ نہیں آرہی جو اکیس گھر وں کو مل رہے ہیں با قی کہا ں پر جا ئے گئے قا نو ن کے مطا بق جو رہا یشی کا لو نی بنتی ہے تو اس کی تعمیر کے بعد ہی اس کو تقسیم ہو تی ہے المیہ تو یہ ہے کہ لنڈ ی کو تل میں ولسن وزیر نے اس کو تعمیر ہو نے سے پہلے سا ڑھے تین لا کھ کی زمین میں فر وخت کر دیا اکیس گھر وں ہم حکو مت سے اپیل کرتے ہیں کہ اس کالو نی کی تقسیم کو روکا جا ئے اودحقداروں کو یہا ں پر حق دیا جا ئے جو لو گ 1914سے رہا یش پز یر ہے وہ محروم ہے ہم گو رنر کے پی کے ،صفیرون منسٹر ،صفیرون سیکرٹر ی ،وزارٹ مذہیبی اموار ،منسٹر ہیو مین رایٹس ،ہو م سیکرٹر ی کے پی کے ،ایڈیشنل چیف سیکرٹری کے پی کے ،ایڈیشنل چیف سیکرٹری فا ٹا ،ڈسٹر کٹ کمشنر پشاور ،پولیٹکل ایجنٹ خیبر اور لنڈ ی کو تل اسسٹنٹ پو لیٹکل ایجنٹ سے پر زور مطا لبہ کر تے ہیں کہ اس کر سچن کا لو نی کو بڑ ھا یا جا ئے تا کہ سب لو گو ں کو اس میں گھر مل سکیں اور اس کے علاوہ ہم تمام انٹر نیشنل ڈونر انٹر نیشنل NGOs اور چر چز کو بھی فنڈکے لئے اپیل کر تے ہیں کہ اس میں ہماری مد دکر ے تا کہ فا ٹا میں ٹو ٹل بیس ہزار کر سچن کمیو نٹی کو فا ٹامیں اپنے گھر مل سکیں اور اس کے علا وہ یہا ں پر کمیو نٹی سنٹرز ،چر چز ،ٹیکنکل سنٹرز ،کمپیو ٹر سنٹرز سلا ئی سنٹرز ،انگلش سنٹرز،اور مینا رٹی سکو ل یہا ں پر تعمیر ہو سکیں ہم کر سچن کمیونٹی پو رے اعتما د کے ساتھ حکو مت اور تمام ڈونر،چر چز سے اپیل کر تے ہیں کہ ہما رے مسا ئل کو جلد ازجلد بحال کر ے

مزید : پشاورصفحہ آخر